.

بیت المقدس : نئی اسرائیلی بستی میں 500 گھروں کی اجازت ملتوی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بیت المقدس کی بلدیہ کے ایک ذمے دار کے مطابق مشرقی بیت المقدس میں اسرائیلیوں کے لیے 500 نئے گھروں کی تعمیر کے اجازت ناموں کے حوالے سے بدھ کے روز مقررہ رائے شماری کو منسوخ کر دیا گیا ہے۔ شہر میں منصوبہ بندی اور ہاؤسنگ کمیٹی کے رکن ہنان روبین نے بتایا کہ رائے شماری منسوخ کر دینے کا مطالبہ وزیراعظم بنیامین نیتینیاہو کی جانب سے کیا گیا۔

روبین کے مطابق اس فیصلے کا مقصد بدھ کی شام امریکی وزیر خارجہ کے اسرائیلی فلسطینی امن سے متعلق خطاب سے قبل.. اوباما انتظامیہ کے ساتھ تعلقات کی کشیدگی میں اضافے سے گریز کرنا ہے۔ منصوبہ بندی اور ہاؤسنگ کی کمیٹی کو بدھ کے روز مقبوضہ بیت المقدس کے مشرقی حصے میں یہودی بستیوں کے علاقے کے اندر اضافی رہائشی یونٹوں کی تعمیر کے اجازت ناموں کو زیر بحث لانا تھا۔

واضح رہے کہ جمعے کے روز سلامتی کونسل میں منظور کی جانے والی قرار داد میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ "مشرقی بیت المقدس سمیت مقوضہ فلسطینی اراضی میں بستیوں سے متعلق تمام تر سرگرمیوں کو فوری طور پر روک دیا جائے"۔ ساتھ ہی یہ بھی باور کرایا گیا ہے کہ اسرائیلی بستیوں کی "کوئی قانونی حیثیت نہیں ہے"۔