.

دبئی آپریشن روم.. پُر امن امارت کا راز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

"العربیہ" نیوز چینل کی ٹیم نے دبئی پولیس کے زیر انتظام آپریشنز روم کا دورہ کیا اور دبئی کے ہر علاقے کے لیے سکیورٹی انتظامات کے سربستہ رازوں کا انکشاف بھی کیا جہاں رہنے والوں کی مجموعی تعداد 25 لاکھ سے زیادہ ہے۔ انسانوں کے اتنے بڑے مجمع کے درمیان سکیورٹی اہل کاروں کی کوئی قابلِ ذکر موجودگی نظر نہیں آتی ہے.. کیوں کہ بہرکیف یہ دبئی ہے۔

آبادی کی بڑی کثافت کے حامل شہر کے مقیمین یا یہاں کا دورہ کرنے والے افراد جس چیز کو سب سے زیادہ محسوس کرتے ہیں وہ ہے ذاتی تحفظ اور شخصی آزادی۔

اس احساس کو یقینی بنانے کے لیے اعلی ترین سطح کا سکیورٹی نظام کام کر رہا ہے جس کے نتیجے میں سرکاری اعداد و شمار کے مطابق دبئی کے رہنے والوں کے لیے امن و امان کے احساس کی شرح 98% سے تجاوز کر چکی ہے۔

دبئی مقامات عامہ اور دیگر جگہاؤں پر نصب مجموعی کیمروں کی تعداد 28 ہزار سے زیادہ ہے۔ تاہم ان سے کسی فرد کی خلوت متاثر نہیں ہوتی۔

سکیورٹی کیمروں کی اتنی بڑی تعداد دبئی پولیس کے کمانڈ اینڈ کنٹرول روم کے ساتھ مربوط ہے۔ اس روم میں تقریبا 80 اہل کار ہیں جو 24 گھنٹے شفٹوں میں اپنے فرائض سر انجام دیتے ہیں۔

اس روم میں مختلف قسم کی اطلاعات موصول ہو رہی ہوتی ہیں جو جرائم ، ٹریفک اور انسانی امور سے متعلق ہوتی ہیں۔ یہاں ایک خاص شعبہ بھی ہے جو کسی بھی مریض کے پاس ایمبولینس کے پہنچنے تک اسے فون کے ذریعے ابتدائی ہنگامی امداد سے متعلق ہدایات فراہم کرتا ہے۔

اس آپریشن روم کو سالانہ تیس لاکھ کے قریب کالز موصول ہوتی ہیں۔