.

المالکی وزیراعظم بنے تو کردستان کی خود مختاری کا اعلان کر دوں گا : بارزانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں کردستان ریجن کے صدر مسعود بارزانی کا کہنا ہے کہ اگر سابق وزیراعظم اور موجودہ نائب صدر نوری المالکی نے بغداد میں وزارت عظمی کا منصب دوبارہ سنبھالا تو وہ عراق میں کردستان کی خود مختاری کا اعلان کر دیں گے۔

ڈیوس میں اقتصادی فورم کے کے ضمن میں عربی روزنامے "الشرق الاوسط" کو دیے گئے بیان میں بارزانی نے نے دوٹوک انداز میں کہا کہ " میں ایسے عراق کو قبول نہیں کر سکتا جس پر المالکی کی حکومت ہو"۔

بارزانی نے انکشاف کیا کہ انہوں نے وزیر اعظم حیدر العبادی کو واضح طور پر کہہ دیا ہے کہ "عراقیوں کے درمیان حقیقی شراکت کے قیام میں ناکامی کے بعد بہتر ہے کہ وہ اچھے ہم سایوں کی طرح رہیں"۔ بارزانی کا یہ بھی کہنا تھا کہ حیدر العبادی کی کابینہ سے ہوشیار زیباری کا سقوط اس کا مقصد بھی نوری المالکی کو دوبارہ سے وزیراعظم کے طور پر لانا ہے۔

"بغداد میں صاحبِ رسوخ درحقیقت ایران ہے "

بارزانی کے مطابق موصل آپریشن میں ابھی تک داعش تنظیم کو کاری ضرب پہنچی ہے تاہم انہوں نے آپریشن کے اختتام کے حوالے سے کسی حتمی وقت کی پیش گوئی سے انکار کر دیا۔ بارزانی نے بتایا کہ داعش تنظیم کے خلاف لڑتے ہوئے اب تک کرد پیشمرگہ فورس کے 1668 جنگجو ہلاک اور 9725 زخمی ہو چکے ہیں جب کہ داعش کا جانی نقصان تقریبا 15 ہزار کے قریب ہے۔

نئی امریکی انتظامیہ کے ساتھ تعلقات کے حوالے سے مسعود بارزانی نے توقع ظاہر کی ہے کہ کردوں کے واسطے امریکا کی سپورٹ جاری رہے گی۔ انہوں نے اس امر کی تردید کی کہ واشنگٹن عراق میں یدِ طولی رکھتا ہے۔ بارزانی کے مطابق بغداد میں اصل رسوخ ایران کا ہے۔