عراقی رکن پارلیمنٹ کا شراب خانے دوبارہ کھولنے کا وعدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراق میں سیاسی اتحاد " دی ڈیموکریٹک سول الائنس" سے تعلق رکھنے والے ایک رکن پارلیمنٹ فائق الشيخ علی نے عرب ممالک سے "عراق کی سپورٹ" اور"اس کے ساتھ کھڑے ہونے" کا مطالبہ کیا ہے۔

حالات حاضرہ سے متعلق "العربیہ" نیوز چینل کے ایک پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے فائق کا کہنا تھا کہ "عربوں کو چاہیے کہ ہمارے ساتھ ہوں"۔ ساتھ ہی انہوں نے داعش تنظیم کے خلاف جنگ میں عرب افواج کو دعوت دینے کی تردید کی اور کہا کہ یہ "عراقی فوج کی ذمے داری ہے"۔ فائق نے عراق میں جاری "دہشت گرد" کارروائیوں کو مذہبی جنگ قرار دیا جس نے ملک کو تباہ کر دیا۔

دوسری جانب عراقی رکن پارلیمنٹ نے "شہری ریاست" کے امکان اور اس کے یقینی بننے کے حوالے سے واضح کیا کہ "مذہبی مراجع ہی وہ جانب ہیں جنہوں نے شہری ریاست کا نعرہ لگایا ہے- بات چیت میں فائق الشیخ علی نے اس امر کا وعدہ کیا کہ وہ عراق میں ایک مرتبہ پھر سے "شراب خانے" کھول دیں گے کیوں کہ یہ شہری ریاست اور اس کی شخصی آزادی کا تقاضا ہے اور شراب پر پابندی منشیات کی راہ ہموار کرنے کے لیے عائد کی گئی۔ انہوں نے باور کرایا کہ "عراق میں منشیات نے ڈیرہ جمانا شروع کر دیا ہے۔ صدام حسین کے وقت منشیات کے پھیلاؤ میں ملوث ہونے کی سزا موت تھی جب کہ آج مذہبی جماعتوں کے زیر سایہ معاملہ یہ ہے کہ منشیات فروش پر پھیلا رہے ہیں!"

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں