موصل :کیمیائی ہتھیار اور زمین سے زمین پر مار کرنے والے روسی میزائل برآمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عراق کے شمالی شہر موصل میں داعش کے خلاف کارروائی کے دوران میں سرکاری سکیورٹی فورسز کو کیمیائی ہتھیار سلفر مسٹرڈ اور روسی ساختہ زمین سے زمین پر مار کرنے والے میزائلوں کا ذخیرہ ملا ہے۔

عراق کی خصوصی فورسز کے بریگیڈیئر جنرل حیدر فضیل نے ہفتے کے روز بتایا ہے کہ فرانسیسی حکام نے اسی ہفتے اس کیمیائی مواد کا تجزیہ کیا ہے اور انھوں نے اس کے سلفرمسٹرڈ ہونے کی تصدیق کی ہے۔

عراقی فورسز نے موصل کے مشرقی حصے میں صحافیوں کو کیمیائی مواد سے بھرا ایک ٹینک دکھایا ہے اور ایک گودام میں رکھے دس بارہ میزائل بھی دکھائے ہیں۔زمین سے زمین پر مار کرنے والے ان راکٹوں پر روس کا ساختہ ملک کے طور پر نام کندہ تھا۔

حیدر فضیل کا کہنا ہے کہ ان راکٹوں کے برآمد ہونے کے بعد اس شبے کو تقویت ملی ہے کہ داعش کے جنگجو کیمیائی مواد کو ہتھیار کے طور پر استعمال کرنے کے لیے تجربے کررہے تھے۔

واضح رہے کہ عراقی اور امریکی حکام ماضی میں متعدد مرتبہ داعش کی جانب سے کیمیائی ہتھیار تیار کرنے کی کوششوں کے بارے میں خبردار کرچکے ہیں۔اس انتہا پسند گروپ نے گذشتہ مہینوں کے دوران میں موصل کے نواحی علاقوں میں کم درجے کے کیمیائی ہتھیار استعمال کیے تھے اور ان سے متعدد افراد ہلاک اور زخمی ہوگئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں