.

اردنی فوج کے شام میں داعش کے ٹھکانوں پر فضائی حملے

بمباری میں متعدد جنگجو ہلاک، اسلحہ ڈپو اور کئی گاڑیاں تباہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اردنی فوج نے شام میں شدت پسند گروپ ’داعش‘ کے متعدد ٹھکانوں پر فضائی حملیے کیے جس کے نتیجے میں ایک بڑا اسلحہ ڈپو اور کئی دوسری اہم عمارتیں تباہ ہوئی ہیں اور کئی جنگجوؤں کے ہلاک اور زخمی ہونے کی بھی اطلاعات ہیں۔

اردنی خبر رساں ادارے ’پیٹرا‘ نے مسلح افواج کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان کا حوالہ دیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ اردنی شاہی اسکواڈ میں شامل طیاروں نے جمعہ اور ہفتہ کے ایام میں شام میں داعش کے مجرموں کے قبضے میں متعدد ٹھکانوں پر فضائی حملے کیے گئے ہیں جن میں دشمن کو بھاری جانی اور مالی نقصان پہنچایا گیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ فضائی بمباری کے نتیجے جنوبی شام میں داعش کا ایک بڑا اسلحہ ڈپو، گاڑیوں میں بارودی مواد بھرنے کے ایک مرکز اور داعشی جنگجوؤں کے ایک رہائشی کمپاؤنڈ کو تباہ کیا گیا۔ حملے میں روایتی جنگی طیاروں کے ساتھ بغیر پائلٹ ڈرون طیارے اور اسمارٹ اسلحہ بھی استعمال کیے گئے۔

اردنی فوج کا کہنا ہے کہ حملے میں داعش کے متعدد عناصر ہلاک اور زخمی ہوئے ہیں۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ جنوبی شام میں داعش کے ٹھکانوں پر حملہ اردن کا دہشت گردی کے خلاف جاری جنگ میں اپنی شمولیت کا اظہار اور داعش کی سرکوبی کی مہم جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ ہے۔ اردن داعش کو اس کے ٹھکانوں کے اندر ختم کرنے کی مہم جاری رکھے گی۔