شام میں ہزاروں قیدیوں کو پھانسی دینے کی فوج داری تحقیقات کا مطالبہ

بشارالاسد نے انسانیت کے خلاف جرائم کا نیا عالمی ریکارڈ قائم کرلیا:اپوزیشن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام کی حزب اختلاف نے سلامتی کونسل سے پرزور مطالبہ کیا ہے کہ وہ بشارالاسد کے جنگی جرائم کی تحقیقات کرتے ہوئے صیدانیا جیل میں ہزاروں قیدیوں کو موت کے گھاٹ اتارے جانے میں ملوث عناصر کے خلاف سخت قانونی کارروائی شروع کرے۔

العربیہ ٹی وی کے مطابق انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ’ایمنسٹی انٹرنیشنل‘ کی طرف سے سامنے آنے والی رپورٹ کے بعد اپوزیشن نے کہا ہے کہ بشارالاسد اور اس کی وفادار فوج منظم جنگی جرائم میں ملوث ہے جس کا سب سے بڑا ثبوت صیدانیا جیل میں ہزاروں قیدیوں کو ماورائے عدالت قتل کرنے سے لی جاسکتی ہے۔

خیال رہے کہ انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیم نے اپنی تازہ رپورٹ میں انکشاف کیا ہے کہ شامی فوج نے دمشق کے قریب واقع صیدانیا نامی جیل میں 13 ہزار افراد کو پھانسی دے کر ہلاک کیا ہے۔

شامی حزب اختلاف نے صیدانیا جیل میں قیدیوں کے قتل عام کی شدید مذمت کرتےہوئے اسے تاریخ انسانی کا بدترین انسانی اور جنگی جرم قرار دیا ہے۔ انہوں نے صیدانیا قید خانےمیں ہزاروں قیدیوں کو موت کے گھاٹ اتارے جانے کی عالمی فوج داری عدالتوں میں تحقیقات کرانے اور قتل عام میں ملوث عناصر کو عبرت ناک سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

اپوزیشن نے مطالبہ کیا ہے کہ سلامتی کونسل فوری طور پرعالمی مبصرین کو شامی فوج کے حراستی مراکز میں بھیجنے اور قیدیوں کے ساتھ ہونے والے انسانیت سوز مظالم کا سلسلہ بند کرانے کے ساتھ تمام بے گناہ قیدیوں کی فوری رہائی کے لیے اقدامات کرے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں