دنیا کے طاقت ور ترین صدر کی امریکی اسٹور کے ساتھ مخاصمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو عوام نے گزشتہ برس آٹھ نومبر کو دنیا کے طاقت ور ترین ملک کے امور چلانے کے واسطے منتخب کیا تھا۔ تاہم وہ "داعش" ، چین اور ایران کے ساتھ بنیادی اصولوں کے حوالے سے تنازع ، فسلطینی اسرائیلی مسئلے کی پیچیدگیاں ، میکسیکو کی سرحد پر دیوار کی تعمیر اور 90 روز کے لیے سات مسلم ممالک کے عوام پر امریکا میں داخلے پر پابندی سے متعلق پیش رفت.. ان سب کو بُھلا کر ایک امریکی ریٹیل اسٹور کے ساتھ الجھ پڑے ہیں۔

Advertisement

ٹرمپ نے ٹوئیٹر کے ذریعے امریکی ریٹیل اسٹوروں کی چین کو کڑی نکتہ چینی کا نشانہ بنایا ہے۔ اس اسٹور نے فروخت میں کمی کے سبب گزشتہ ہفتے امریکی صدر کی بیٹی ایوانکا کی کمپنی کے ملبوسات کی فروخت روک دی تھی۔ ٹرمپ نے اپنی ٹوئیٹ میں ایوانکا کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ " اس کے ساتھNordstrom کی جانب سے اچھا معاملہ نہیں کیا گیا جو ایک بھیانک امر ہے"۔ یہ ریٹیل اسٹور 1901 میں قائم کیا گیا تھا۔ امریکا کی 40 ریاستوں اور کینیڈا میں اس کی مجموعی طور پر 347 شاخیں ہیں۔

دوسری جانب معروف ریٹیل اسٹور "Nordstrom" کی طرف سے اتوار کے روز جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ امریکی صدر کی بیٹی کے ڈیزائن کردہ ملبوسات کی فروخت روک دینے کا سبب یہ ہے کہ خریداروں نے گزشتہ نومبر میں مطالبہ کیا تھا کہ ایوانکا کے ٹریڈ مارک کی حامل مصنوعات کی فروخت روک دی جائے.. اس واسطے صدر کی بیٹی کو پریشانی محسوس ہوئی اور اس نے اپنے باپ سے شکایت کر ڈالی۔ اس کے بعد ٹرمپ نے تیزی دکھاتے ہوئے ٹوئیٹر کے ذریعے انٹرنیٹ پر ذاتی نوعیت کے ایسے معاملے کو پھیلایا جس کا امریکیوں سے دور دور تک کوئی واسطہ نہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں