.

امریکا کے ساتھ تاریخی اور تزویراتی تعلقات ہیں : سعودی ولی عہد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ریاض میں سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن نایف بن عبدالعزیز نے جمعے کی شام امریکی مرکزی انٹیلی جنس ایجنسی CIA کے سربراہ مائیکل بومبیو کے ہاتھوں "جارج ٹینٹ" میڈل وصول کیا۔ سعودی سرکاری نیوز ایجنسی SPA کے مطابق سعودی وزیر داخلہ شہزادہ محمد کو یہ میڈل بین الاقوامی سطح پر انسداد دہشت گردی کے میدان میں انٹیلی جنس کے حوالے سے نمایاں کردار ادا کرنے پر دیا گیا ہے۔ اس موقع پر سعودی نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان اور ریاض میں سعودی سفارت خانے کے ناظم الامور کرسٹوفر ہینزل بھی موجود تھے۔

سعودی ولی عہد نے میڈل وصول کرنے کے بعد صحافیوں کو دیے گئے بیان میں امریکی CIA کا شکریہ ادا کیا اور باور کرایا کہ یہ میڈل مملکت کی قیادت کی انتھک کوششوں کا ثمرہ ہے جس میں سرفہرست خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور سعودی سکیورٹی فورسز کے بہادر اہل کار ہیں۔

امریکا کے ساتھ سعودی عرب کے تعلقات کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ " امریکا کے ساتھ ہمارے تعلقات تاریخی اور تزویراتی نوعیت کے ہیں اور دونوں ملکوں کے درمیان میخ گاڑنے کی کوشش کرنے والا ہر گز کامیاب نہیں ہو سکے گا"۔

سعودی ولی عہد کا کہنا تھا کہ تمام آسمانی مذاہب دہشت گرد ٹولوں کے شیطانی نظریات اور افعال سے مبرا ہیں۔ انہوں نے باور کرایا کہ مملکت ہر شکل میں دہشت گردی کی مکمل مذمت کرتی ہے اور ہم اللہ کے حکم سے پوری مملکت میں فکری اور سکیورٹی طور پر دہشت گردی سے نمٹ رہے ہیں۔ شہزادہ محمد نے زور دیا کہ دہشت گردی مشترکہ بین الاقوامی ذمے داری ہے جو ہر سطح پر عالمی کوششوں کا تقاضہ کرتی ہے.. ان میں سکیورٹی ، فکری ، مالی ، عسکری اور میڈیا کا میدان شامل ہیں۔

سعودی ولی عہد نے امریکی CIA کے سربراہ کے ساتھ ملاقات میں دونوں ملکوں کی مشترکہ دل چسپی کے حامل متعدد امور پر بات چیت کی اور سکیورٹی بالخصوص انسداد دہشت گردی کے شعبے میں تعاون بڑھانے کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال ہوا۔