.

یمنی باغیوں نے ملک میں بارودی سرنگوں کا جال بچھا دیا

بارودی سرنگوں سے شہری شدید خطرات سے دوچار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں اتحادی فوج اور سرکاری فوج کے ہاتھوں شکست خوردی کے شکار ایران نواز حوثی باغیوں اور مںحرف سابق صدر علی عبداللہ صالح کی وفادار ملیشیا نے ملک میں بارودی سرنگوں کا جال بچھا دیا۔

العربیہ کے برادر چینل’الحدث‘ کی جانب سے نشر کی گئی ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ یمنی باغیوں نے ملک کے کئی شہروں میں ہزاروں کی تعداد میں بارودی سرنگیں بچھا دی ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ باغیوں نے سرکاری فوج کی پیش قدمی روکنے اور حکومتی فورسز کو زیادہ سے زیادہ جانی نقصان پہنچانے کے لیے شہروں، دیہاتوں، شاہراؤں اور گلیوں محلوں میں جگہ جگہ بارودی سرنگیں بچھا رکھیں جس کے بعد ملک ’موت کے کھلیان‘ کا منظر پیش کررہا ہے۔

یمنی باغیوں کی طرف سے بچھائی گئی بارودی سرنگوں کے نتیجے میں اب تک سیکڑوں عام شہری شہید اور زخمی ہوچکے ہیں۔ یہ سرنگیں ہمہ وقت مقامی آبادی کے لیے سنگین خطرے کا باعث ہیں۔

انسانی حقوق کی تنظیموں کی طرف سے بھی متعدد بار یمن میں بے تحاشا بارودی سرنگیں بچھائے جانے کے معاملے پر توجہ دلائی گئی ہے۔ عالمی اداروں کا کہنا ہے کہ یمنی باغی انسانی حقوق کی دیگر سنگین پالیوں کے ساتھ ساتھ بارودی سرنگوں کے ذریعے عام شہریوں کی زندگیوں کو بھی خطرات میں ڈال رہے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق بارودی سرنگوں کے خوف سے ہزاروں شہری اپنے آبائی علاقوں اور گھروں کو لوٹنے سے انکاری ہیں۔ ایک رپورٹ کے مطابق گذشتہ دو برسوں کے دوران باغیوں نے اڑھائی لاکھ سے زیادہ بارودی سرنگیں بچھائی ہیں۔ ان میں ایک لاکھ بارودی سرنگیں عدن، لحج اور الضالع گورنریوں میں بچھائی گئیں جبکہ الجوف کےعلاقے میں 30 ہزار بارودی سرنگوں کی موجودگی کا پتا چلا ہے۔ حکومتی فورسز نے عدن، لحج اور بین میں 30 ہزار بارودی سرنگوں کو تلف کیا ہے جب کہ مآرب میں 36 ہزار بارودی سرنگیں ناکارہ بنائی گئی ہیں۔

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ‘ہیومن رائٹس واچ‘ کے مطابق یمن میں باردوی سرنگوں سے بیسیوں شہری جاں بحق ہوچکے ہیں۔ رپورٹ کے مطابق باغیوں کی طرف سے تعز، عدن، ابین، لحج اور مآرب کے مقامات پر بارودی سرنگوں کا جال عام شہری آبادی کے سرے پر لٹکتی تلوار ہے۔