.

شام : ایران کے دو افسران اور افغان جنگجوؤں کی ہلاکتیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی میڈیا کے مطابق گزشتہ چند روز کے دوران شامی اپوزیشن کے ساتھ جھڑپوں میں ایرانی پاسداران انقلاب کے دو افسران اور افغان ملیشیا "فاطميون" کے متعدد ارکان ہلاک ہو گئے۔

ایرانی مسلح افواج کے زیر انتظام نیوز ویب سائٹ "دفاع پریس" نے بتایا ہے کہ منگل کے روز شام کے جنوبی صوبے درعا میں شامی مسلح اپوزیشن کے خلاف لڑائی کے دوران پاسداران انقلاب کی ذیلی تنظیم قدس فورس کا ایک کرنل مصطفى زال نجاد مارا گیا۔ نجاد قاسم سلیمانی کے انتہائی قریبی مشیروں میں شمار کیا جاتا ہے۔

پاسداران انقلاب کا ایک اور افسر مہدی نعیمیائی اتوار کے روز حماہ صوبے میں شامی اپوزیشن کے ساتھ جھڑپوں کے دوران اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔ ایرانی نیوز ایجنسیوں کے مطابق نعیمیائی ایران کے شمالی شہر جالوس میں پاسداران انقلاب کے ذیلی "امام علی" گروپ سے تعلق رکھتا ہے۔

ان کے علاوہ ایرانی میڈیا نے افغان ملیشیا "فاطميون" کے متعدد جنگجوؤں کی تدفین کی بھی خبر دی ہے جو شام میں معرکوں کے دوران ہلاک ہو گئے۔ ان میں پیر کے روز حلب میں مارے جانے والے محمد حسن غلامی اور کریم حسینی شامل ہیں۔

دوسری جانب ایرانی نیوز ایجنسی "اِرنا" کے مطابق عرب اور افریقی امور کے لیے ایرانی وزیر خارجہ کے معاون حسين جابری انصاری نے بدھ کے روز روسی صدر کے خصوصی نمائندے الیگزینڈر لیفرنٹیو سے ملاقات کی۔ دونوں شخصیات نے جمعرات کے روز شام سے متعلق شروع ہونے والی عمومی بات چیت کے حوالے سے مواقف کو قریب لانے کے سلسلے میں مشاورت کی۔

واضح رہے کہ شام کے حوالے سے ماسکو کی انقرہ کے ساتھ قریبی کوآرڈی نیشن کے سبب ایران اور روس کے درمیان اختلاف پایا جاتا ہے۔