.

جیش الحر اسد رجیم سے براہ راست مذاکرات کے لیے تیار

شامی باغی داعش ،القاعدہ اور ایرانی ملیشیاؤں کو دہشت گرد سمجھتے ہیں :سینیر افسر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی باغیوں اور منحرف فوجیوں پر مشتمل جیش الحر کے ایک سینیر افسر نے کہا ہے کہ باغی تنازعے کا سیاسی حل چاہتے ہیں اور وہ اسد رجیم کے ساتھ براہ راست مذاکرات کے لیے تیار ہیں۔

اس افسر کا کہنا ہے کہ قزاقستان کے دارالحکومت آستانہ میں ہونے والے حالیہ مذاکرات تنازعے کے کسی سیاسی حل تک پہنچنے کے لیے کوئی بنیاد مہیا نہیں کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ شامی باغی داعش ،القاعدہ اور ایرانی ملیشیاؤں کو دہشت گرد سمجھتے ہیں۔