.

عراق دہشت گردی مخالف جنگ کے حتمی مراحل میں ہے: انتونیو گوٹیریس

داعش کے خلاف جنگ میں شہریوں کا تحفظ اولین ترجیح ہونی چاہیے: بغداد میں صحافیوں سے گفتگو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوٹیریس نے اپنے عراق کے دورے کو تاریخی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ میزبان ملک کی داعش کے خلاف جنگ آخری مراحل میں ہے۔انھوں نے کہا کہ ہم عراقی حکومت کی اداروں کی تعمیر اور عراقیوں کو درکار خدمات مہیا کرنے کے لیے کام کررہے ہیں۔

انھوں نے یہ باتیں جمعرات کے روز بغداد میں عراقی وزیر خارجہ ابراہیم الجعفری سے ملاقات کے بعد ایک بیان میں کہی ہیں۔ انھوں نے ابراہیم الجعفری اور دوسرے عراقی عہدہ داروں کے ساتھ داعش کے خلاف شمالی شہر موصل میں جاری جنگ کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا ہے۔

عراقی وزیر خارجہ نے اس ملاقات کے بعد کہا ہے کہ ان کی حکومت عراقی عوام کو مختلف اقسام کی امداد مہیا کرنے پراقوام متحدہ کے مؤقف کو سراہتی ہے۔انھوں نے 2003ء کے بعد بغداد میں اقوام متحدہ کے مشن کی جانب سے عراقیوں کو مختلف شعبوں میں مہیا کی جانے والی امداد پر شکریہ ادا کیا اور مشن کے عملے کے کردار کی تعریف کی۔

انتونیو گوٹیریس نے عراق کے وزیراعظم حیدر العبادی سے بھی ملاقات کی ہے اور اس کے بعد وہ خود مختار شمالی علاقے کردستان کے دارالحکومت اربیل کے لیے روانہ ہوگئے۔

انھوں نے عراقی وزیراعظم کے ساتھ مشترکہ نیوز کانفرنس میں کہا کہ ’’ یہ دورہ عراقی عوام، حکومت اور عراقی اداروں کے ساتھ اظہار یک جہتی کے لیے ہے۔ یہ یک جہتی عراق کے لیے ایک تاریخی لمحہ ہے۔عراق اس وقت دہشت گردی کے خلاف جنگ کے حتمی مراحل میں ہے‘‘۔