.

مشرقِ وسطیٰ تنازع کا دو ریاستی حل فوری طور پرناگزیر ہے : جرمن صدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جرمن صدر فرینک والٹر اسٹینمائر نے کہا ہے کہ اسرائیلی ، فلسطینی تنازع کے دو ریاستی حل کی جانب پیش قدمی کے لیے فوری طور پر آغاز کی ضرورت ہے۔

وہ منگل کے روز غربِ اردن کے شہر رام اللہ میں فلسطینی صدر محمود عباس سے ملاقات کے بعد صحافیوں سے گفتگو کررہے تھے۔انھوں نے کہا کہ اسرائیل کے ساتھ ایک فلسطینی ریاست کے قیام کے لیے پہلے ہی بہت زیادہ وقت ضائع کیا جاچکا ہے۔

جرمن صدر کا کہنا تھا کہ ’’ ہمارے نقطہ نظر سے اس تنازع کا کوئی دوسرا حل نہیں ہے اور یہی وقت ہے کہ اس حل کے تقاضوں کو پورا کرنے کے لیے کام کیا جائے‘‘۔

فلسطینی صدر محمود عباس نے گذشتہ ہفتے واشنگٹن میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کی تھی۔میزبان صدر نے ان سے اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان تنازع کے حل کے لیے ایک معاہدہ کرانے کا وعدہ کیا تھا۔امریکی صدر اسی ماہ کے آخر میں مقبوضہ فلسطینی علاقوں کے دورے پر آرہے ہیں۔

صدر محمود عباس نے سوموار کے روز ایک انٹرویو میں بتایا تھا:’’انھیں امریکی صدر نے ایسا تاثر دیا تھا کہ وہ ایک سال یا اس سے بھی کم عرصے میں تیزی سے کچھ کرنا چاہتے ہیں‘‘۔