.

’فتح شام‘ محاذ کے سربراہ کے سرکی قیمت 1 کروڑ ڈالر مقرر

محمد الجولانی کے بارے میں معلومات فراہم کرنے پر امریکی انعام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزارت خارجہ نے سابقہ النصرہ فرنٹ اور موجودہ ’فتح الشام محاذ‘ کے سربراہ محمد الجولانی کے ٹھکانے کے بارے میں معلومات فراہم کرنے پر 10 ملین ڈالر کا انعام مقرر کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق امریکی محکمہ خارجہ کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ یہ پہلا موقع ہے جب وزارت خارجہ نے فتح الشام محاذ کے سربراہ کے سرکی قیمت مقرر کرتے ہوئے اس کے بارے میں معلومات فراہم کرنے پر انعام مقرر کیا ہے۔

خیال رہے کہ فتح الشام ماضی میں ’النصرہ فرنٹ‘ کے نام سے مشہور تھی اور القاعدہ کی ایک ذیلی تنظیم کے طور پرجانا جاتا تھا۔ اس گروپ نے 2016ء میں القاعدہ سے ناطہ توڑ لیا اور اپنا نام النصرہ فرنٹ کے بجائے فتح الشام محاذ رکھا تاہم امریکا نے اس کے باوجود اس تنظیم کو دہشت گرد گروپوں کی فہرست میں شامل رکھا ہے۔

امریکی وزارت خارجہ کے ایک عہدیدار نے ’اے ایف پی‘کو بتایا کہ شام میں لڑکی والی النصرہ فرنٹ نام بدلنے کے باوجود اب بھی القاعدہ ہی کی ایک شاخ ہے۔ داعش کے بعد یہ شام میں لڑنے والی سب سے بڑی شدت پسند تنظیم ہے۔

رواں سال جنوری میں شام میں لڑنے والے چار گروپوں نے فتح الشام محاذ میں شمولیت اختیار کی تھی جس کے بعد اسے ’سیرین فریڈم کونسل‘ کا نام دیا گیا تھا۔

امریکا کی قیادت میں شام میں دہشت گردی کے خلاف سرگرم اتحادی ممالک کی بمباری میں فتح الشام محاذ کو بھی نشانہ بنایا جاتا رہا ہے جس میں تنظیم کے کئی سرکردہ لیڈر اور جنگجو ہلاک ہو چکے ہیں۔