.

ٹرمپ کے دورہِ ریاض کو اقوام متحدہ کے اہل کاروں کی توجہ حاصل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ میں عرب اور بین الاقوامی سفارتی حلقوں میں ان دنوں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے سعودی عرب کے دورے کی اہمیت کا چرچا ہے۔

جمعے کے روز "العربیہ" سے گفتگو کرتے ہوئے نیویارک میں اقوام متحدہ کے کی انسداد دہشت گردی کی ورکنگ ٹیم کے بیورو ڈائریکٹر جہانگیر خان نے دورے کی اہمیت پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ " اقوام متحدہ اور تنظیم میں ہم سب مرکزی نوعیت کے امور مثلا انسداد دہشتِ گردی کے میدان میں بین الاقوامی تعاون مضبوط بنانے کی اہمیت پر یقین رکھتے ہیں۔ ریاض میں مقررہ تین سربراہ اجلاسوں کا مقصد بین الاقوامی برادری کو درپیش نمایاں ترین خطروں سے نمٹنے کی حکمت عملی جائزہ لینا ہے جس میں دہشت گردی سرِ فہرست ہے"۔

ادھر اقوام متحدہ میں یمن کے مستقل مندوب خالد الیمانی نے اپنے ملک میں آئینی حکومت کی واپسی کے منصوبے کے حوالے سے ٹرمپ کے دورہ سعودی عرب کی اہمیت کی جانب اشارہ کیا۔

بعض مندوبین کے نزدیک امریکی صدر کا سعودی عرب سے دورے کا آغاز اپنے اندر گہرے معنی رکھتا ہے۔

اقوام متحدہ میں سفارت کاروں کے خیال میں صدر ٹرمپ کے دورہ سعودی عرب اور وہاں تین سربراہ اجلاسوں کے انعقاد سے امریکا اور پورے خطے کے درمیان مکالمے اور تعاون کے نئے باب کا آغاز ہوگا اور صرف مکالمے اور تعاون کے ذریعے ہی فریقین کے لیے ممکن ہو گا کہ وہ کٹھن مسائل کو حل کریں اور اپنے عوام کے مفادات کو یقینی بنائیں۔