.

پاپولر موبیلائزیشن ایرانیوں کے بغیر داعش سے نہیں لڑ سکتی: پیشمرگہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں کردستان حکومت کی وزارتِ پیشمرگہ نے شیعہ ملیشیاؤں کے اتحاد پاپولر موبیلائزیشن کے ایک رہ نما جواد الطلیباوی کے اُس بیان پر شدید ردّ عمل کا اظہار کیا ہے جس میں الطلیباوی نے پیشمرگہ فورسز اور کردستان ریجن کے صدر مسعود بارزانی کو تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔
وزارت کے مطابق الطلیباوی کا بیان کردستان ریجن کی خود مختاری پر حملہ ہے اور یہ نکتہ چینی سابق عراقی وزیر اعظم نوری المالکی کے بیان سے مماثلت رکھتی ہے۔
وزارت کے بیان میں باور کرایا گیا ہے کہ پاپولر موبیلائزیشن داعش تنظیم سے لڑنے کی طاقت نہیں رکھتی ہے اور وہ ایرانی مشیران کا سہارا لے رہی ہے۔
اس سے قبل جواد الطلیباوی نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ " پیشمرگہ کی قیادت کے اس بیان کے بعد کہ وہ عراقی اراضی کو آزاد کرانے والوں کے سر قلم کر ڈالیں گے.. ہر معزز عراقی کے سامنے مسعود بارزانی کا پاپولر موبیلائزیشن کے گروپوں کے خلاف بڑا سازشی کردار واضح ہو چکا ہے"۔
الطلیباوی کا مزید کہنا تھا کہ " کُرد قیادت کو جان لینا چاہیے کہ مرد ہمیشہ جنگوں میں اپی تلواروں کے ذریعے دھمکی دیتے ہیں اور لڑتے ہیں۔ اگر مرد دوسروں کے تلواروں کے ذریعے دھمکائیں تو یہ ان کے لیے باعث عار ہے۔ لہذا ہم مسعود بارزانی اور جو کوئی بھی ان کے نقش قدم پر چلا ان سب کو خبردار کر رہے ہیں کہ امریکی افواج کو لڑائی کے محاذوں پر ہمارے جنگجوؤں کو نشانہ بنانے پر اکسانے کے خطرناک نتائج سامنے آئیں گے"۔