.

بحرین میں سرگرم قطری حمایت یافتہ عسکری گروپ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بحرین کی حکومت نے قطر کی حمایت یافتہ چھ دہشت گرد اور انتہا پسند تنظیموں کی فہرست جاری کی ہے۔ ان تنظیموں پر ملک میں فرقہ واریت پھیلانے اور دہشت گردی کی کارروائیوں میں ملوث ہونے کا الزام ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایرانی حمایت یافتہ عسکری گروپ بحرین میں مسلح کارروائیوں، قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں، شہریوں اور سرکاری تنصیبات پر حملوں میں مشہور ہیں۔

بحرین کی جانب سے جاری کردہ فہرست گذشتہ روز مصر اور خلیجی ملکوں کی اس مشترکہ بیان میں شامل ہے جس میں قطری حمایت یافتہ تنظیموں کی تفصیلات بیان کی گئی ہیں۔

بحرین میں قطری فنڈڈ گروپوں میں ’سرایا الاشتر‘ سر فہرست ہے۔ یہ اہل تشیع مسلک کی انتہا پسند تنظیم ہے جو ملک میں مخصوص نظریات مسلط کرنے، ظہور امام مہدی غائب کے لیے مسلح کارروائیوں پر یقین رکھتی ہے۔ یہ گروپ بحرین میں سیکیورٹی افسران اور حکومتی شخصیات پرقاتلانہ حملوں کےساتھ ساتھ ایک اماراتی افسر کو قتل کرنے کا بھی ذمہ دار ہے۔

منامہ حکومت کا کہنا ہے کہ ایران کے ساتھ ساتھ اس گروپ کو خلیجی ملک قطر کی طرف سے بھی مالی مدد ملتی رہی ہے۔

دہشت گردی کی فہرست میں شامل دوسری شدت پسند تنظیم ’المختار بریگیڈ‘ ہے۔ اس گروپ نے ویڈیوز اور آڈیو پیغامات میں صراحت کے ساتھ ریاست کے خلاف ہتھیار اٹھانے کا دعویٰ کیا۔ یہ تنظیم اغواء برائے تاوان جیسی دہشت گردانہ اور غیرانسانی سرگرمیوں میں ملوث ہے۔ اس گروپ نے کچھ عرصہ قبل بیس سال سے بھی کم عمر کےایک نوجوان کو تاوان کے لیے اغواء کیا تھا۔

بحرینی حزب اللہ بھی قطر کی حمایت یافتہ گروپوں میں شامل ایک عسکری گروپ ہے۔یہ تنظیم 1981ء کے بعد بحرین میں مسلح کارروائیوں سے حکومت کا تختہ الٹنے، ملک میں تخریب کاری، نجی املاک کی توڑپھوڑ اورانہیں نذرآتش کرنے میں ملوث ہے۔ اس تنظیم نے 1994ء اور 1996ء میں بحرین میں ہونے والے تخریب کاری کے واقعات میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا تھا۔

خلیجی مصری مشترکہ بیان میں بحرین میں سرگرم قطری حمایت یافتہ تنظیموں میں ’سرایا المقاومۃ [ مزاحمتی بریگیڈ] ’اتحاد 14 فروری‘ اور تحریک احرار بحرین بھی شامل ہیں۔