.

ریپڈ ایکشن فورس مکہ مکرمہ میں اللہ کے مہمانوں کی حفاظت پر مامور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مکہ مکرمہ کا رخ کرنے والوں کو الشمیسی چیک پوائنٹ اور دیگر تمام گزر گاہوں کو عبور کرتے ہوئے وہاں سعودی سکیورٹی فورسز کے ہر دم چوکس وتیار اہل کار نظر آتے ہیں۔ اس دوران ریپڈ ایکشن فورس کے کمانڈر میجر محمد سعد القرنی صورت حال پر نظر رکھتے ہوئے اپنی ٹیم کے ارکان کو ہدایات دیںے میں مصروف ہوتے ہیں۔

العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے میجر القرنی نے بتایا کہ " ہم بیت اللہ کی زیارت کرنے والوں کے لیے انسانی خدمت پیش کرتے ہیں۔ اس دوران ضرورت کے مطابق ہدایت ملنے پر فوری مداخلت کی کارروائی بھی انجام دیتے ہیں"۔

الشمیسی چیک پوائنٹ پر متعین سارجنٹ صالح الربیعان کی عقابی آنکھیں ہر آنے والی سواری کی کڑی نگرانی کر رہی ہوتی ہیں۔ امن وسلامتی کو یقینی بنانے کے لیے وہ ہمہ وقت انتہائی چوکنا رہتے ہیں اور ان کے ہاتھوں کی انگلیاں اپنے جدید ترین اسلحے کی لبلبی پر رہتی ہیں۔

العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے ریپڈ ایکشن یونٹ کے اہل کار صالح الربیعان نے بتایا کہ "میں ہنگامی صورت حال سے نمٹنے سے متعلق بین الاقوامی سطح کے متعدد تربیتی کورسز مکمل کر چکا ہوں۔ ان میں عام تعاقب، کنٹرول کے لیے جھڑپ، اسپیشل آپریشن اور نشانچی کی تربیت شامل ہے"۔

الشمیسی چیک پوائنٹ پر فوری مداخلت فورس کے فیلڈ سپروائزر اور تمام سارجنٹوں کے سربراہ مبارک العجمی گشت کرتے ہوئے اپنے اہل کاروں کے کام کا معائنہ کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔

العربیہ سے گفتگو کرتے ہوئے العجمی کا کہنا تھا کہ "یہ میرے لیے فخر کی بات ہے کہ میں اللہ کے مہمانوں کی خدمت پر مامور فوری مداخلت کے یونٹ میں شریک ہوں۔ میں اور میرے تمام ساتھی اس پر فخر کرتے ہیں اور یہ ہم سب کے لیے انتہائی سعادت کی بات ہے"۔

سعودی عرب کی جانب سے مکہ مکرمہ کے بیرونی مرکزی راستوں پر دن رات مستقل طور پر ریپڈ ایکشن یونٹوں کو تعینات کر کے مملکت کی سیکورٹی طاقت کو مضبوط بنایا جا رہا ہے۔