.

جاسوسی کی نئی تدابیر کے لیے اسرائیلی فنڈ کا قیام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل کی انٹیلی جنس ایجنسی موساد نے جاسوسی کے شعبے میں نئی تدابیر جاننے میں معاونت کے لیے ایک سرمایہ کاری فنڈ قائم کیا ہے۔ اس فنڈ کے تحت نئے خیالات اور افکار لانے کے لیے فی منصوبہ بیس لاکھ شیکل (تقریبا 5.7 لاکھ ڈالر) کی امداد بھی دی جا رہی ہے۔

ایک بیان میں اسرائیلی حکومت کا کہنا تھا کہ موساد ایجنسی مختلف شعبوں میں ٹکنالوجی کے حصول کے واسطے کوشاں ہے۔ ان میں روبوٹِکس اور مختصر کاری اور دسترس سے بچاؤ کے عمل کے علاوہ دستاویزات سے معلومات نکالنے کے جدید طریقے اور کارروائیوں کو مزید خفیہ طور پر انجام دینے کے طریقے شامل ہیں۔

اس نئے فنڈ کو Libertad کا نام دیا گیا ہے۔ فنڈ کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ مالی امداد حاصل کرنے والے پروجیکٹ ڈیولپرز کے پاس اپنی مصنوعات کے حقوق باقی رہیں گے اور وہ ان کو فروخت بھی کر سکیں گے۔

بیان کے مطابق " موساد جدت طرازی اور امتیازی خصوصیات کی حامل ٹکنالوجی سامنے لانے کی حوصلہ افزائی کرنا چاہتی ہے۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو نے ٹوئیٹر پر ایک مختصر وڈیو کلپ پوسٹ کیا جس میں مستقبل کی ممکنہ ٹکنالوجی کو ظاہر کیا گیا ہے۔ نیتن یاہو نے پوسٹ کے ساتھ تحریر کیا ہے کہ "موساد اپنی اولین اور عظیم ترین ذمے داری انجام دینے یعنی اسرائیل کی سکیورٹی کو یقینی بنانے کے سلسلے میں جدّت اور امتیاز کے ساتھ آگے بڑھنے کا سفر جاری رکھے گی"۔