مسجد نبویﷺ: 14 صدیوں کے دوران 14 مراحل کی کہانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مدینہ منورہ میں 1050 مربع میٹر کے رقبے پر اپنے اصحاب کے ساتھ مل کر مسجد نبوی کی تعمیر کا آغاز کیا تھا۔ اس تعمیر میں بنیادی طور پر اینٹوں ، پتھروں ، کھجور کے تنوں ، چھپّر کی چھت اور کھجور کے تنوں کے سُتونوں کا سہارا لیا گیا۔

تاہم تاریخ پر نظر ڈالیں تو اس پہلی تعمیر کے بنیادی ڈھانچے نے گزرتے وقت کے ساتھ ترقی کی منازل طے کیں یہاں تک کہ اس کا رقبہ 5 لاکھ مربع میٹر سے بھی زیادہ ہو گیا۔

اس سلسلے میں مسجد نبوی کی پہلی توسیع رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں ہی کی گئی جب 1425 میٹر کے اضافے کے ساتھ مسجد کا مجموعی رقبہ 2500 مربع میٹر تک پہنچ گیا۔

مسجد نبوی شریف کے امور کی پریذیڈنسی میں تعلقات عامہ کے ڈائریکٹر عبدالواحد الحطاب نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ مسجد نبوی کی تعمیر کا ارتقاء جاری رہا یہاں تک کہ شاہ سلمان کے دور کی توسیع تک کا وقت آ گیا اور اس طرح مسجد کے رقبے میں اس کی تعمیر کے بعد سے 300 گُنا اضافہ ہو چکا ہے۔

تقریبا 1400 برس قبل ہجرت کے پہلے سال 1050 مربع میٹر کے رقبے پر مسجد نبوی کی تعمیر کی گئی۔

مسجد کی پہلی سن 7 ہجری میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ہاتھوں انجام پائی جب رقبے میں 1425 میٹر کا اضافہ کیا گیا اور اس طرح مسجد کا مجموعی رقبہ 2500 مربع میٹر کے قریب ہو گیا۔

سن 17 ہجری میں امیر المؤمنین عمر بن الخطاب رضی اللہ عنہ نے مسجد نبوی میں 1100 میٹر کا اضافہ کیا۔ اس طرح مجموعی رقبہ 3600 مربع میٹر ہو گیا۔

سن 29 سے 30 ہجری کے درمیان خلیفہ سوم عثمان بن عفان رضی اللہ عنہ نے 496 میٹر کا اضافہ کیا ، اس طرح مجموعی رقبہ 4096 مربع میٹر ہو گیا۔ سن 88 سے 91 ہجری کے درمیان اموی خلیفہ الولید بن عبدالملک نے 2369 میٹر کا اضافہ کیا جس کے بعد مسجد کا مجموعی رقبہ 6465 مربع میٹر تک پہنچ گیا۔

سن 161 ہجری میں عباسی خلیفہ المہدی نے 2450 میٹر کی توسیع کی جس کے بعد مسجد نبوی کا مجموعی رقبہ 8915 مربع میٹر ہو گیا۔

سن 888 ہجری میں برجی مملوک سلطنت کے بادشاہ اشرف قائتبائی نے مسجد نبوی میں محض 120 میٹر کا اضافہ کیا جس کے بعد مجموعی رقبہ 9035 مربع میٹر ہو گیا۔ سن 1265 ہجری میں عثمانی دور کے سلطان عبدالمجيد نے 1293 میٹر کا اضافہ کیا جس کے بعد مجموعی رقبہ 10328 مربع میٹر تک پہنچ گیا۔

مملکتِ سعودی عرب کے قیام کے بعد شاہ عبدالعزیز آل سعود نے 1372 ہجری میں مسجد نبوی کے رقبے میں 6024 میٹر کا اضافہ کیا تا کہ مجموعی رقبہ 16352 مربع میٹر ہو جائے۔

شاہ فہد بن عبدالعزیز کے دور میں مسجد نبوی کی اُس وقت تک کی سب سے بڑی توسیع دیکھنے میں آئی جب سابقہ رقبے میں 82 ہزار میٹر کا اضافہ کیا گیا۔ اس طرح مسجد کا مجموعی رقبہ 98352 مربع میٹر تک پہنچ گیا جب کہ اطراف کے صحنوں کا رقبہ 2.35 لاکھ مربع میٹر ہو گیا۔

شاہ عبداللہ بن عبدالعزیز نے مشرقی سمت کے صحنوں میں 30500 میٹر کی توسیع کا حکم دیا تا کہ بیرونی صحنوں کا مجموعی رقبہ 3.65 لاکھ مربع میٹر ہو جائے۔ اس کے علاوہ صحنوں میں سایہ فراہم کرنے کے واسطے 250 چھتریاں اور پانی کے چھڑکاؤ کے لیے 436 پنکھے نصب کیے گئے۔

سن 1433 ہجری مسجد نبوی کی تاریخ کا ایک اہم ترین سال شمار کیا جاتا ہے جب شاہ عبداللہ نے مسجد کی تاریخ کی سب سے بڑی توسیع کا سنگِ بنیاد رکھا۔ اس طرح بیرونی صحنوں کے ساتھ مسجد کا مجموعی رقبہ 5 لاکھ مربع میٹر سے بھی زیادہ ہو گیا۔ آخر کار سن 1436 ہجری میں شاہ سلمان نے توسیع کی نگرانی سنبھالی اور اس کو مسجد نبوی کی نئی تاریخی توسیع کے ضمن میں مکمل کرنے کا حکم جاری کیا۔

1

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں