.

عراقی وزیراعظم کا موصل میں داعش کے خلاف اعلان ِ فتح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے وزیراعظم حیدر العبادی نے شمالی شہر موصل میں سخت گیر جنگجو گروپ داعش کے خلاف گذشتہ نو ماہ سے جاری جنگ میں فتح کا اعلان کردیا ہے۔

عراقی وزیراعظم کے دفتر کی جانب سے اتوار کو جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ ’’ مسلح افواج کے کمانڈر انچیف حیدر العبادی نو آزاد شہر موصل میں پہنچے ہیں اور انھوں نے بہادر جنگجوؤں اور عراقی عوام کو اس فتح عظیم پر مبارک باد دی ہے‘‘۔

حیدر العبادی کے ٹویٹر اکاؤنٹ پر ان کی موصل میں آمد کی ایک تصویر جاری کی گئی ہے۔اس میں وہ سیاہ فوجی وردی میں ملبوس نظر آرہے ہیں اور انھوں نے ٹوپی پہن رکھی ہے۔انھوں نے موصل پہنچ کر ہی داعش کے خلاف لڑائی میں اپنی فورسز کی فتح کا اعلان کیا ہے۔

لیکن موصل کے مغربی حصے میں ابھی لڑائی مکمل طور پر ختم نہیں ہوئی ہے۔وہاں سے فائرنگ کی آوازیں سنائی دے رہی تھیں اور جس وقت عراقی وزیراعظم کے دفتر نے بیان جاری کیا،عین اس وقت شہر پر فضائی حملے بھی جاری تھے۔

قبل ازیں عراقی فوج کے ترجمان بریگیڈئیر جنرل یحییٰ رسول نے سرکاری ٹیلی ویژن کو بتایا کہ داعش کے تیس جنگجو دریائے دجلہ عبور کرنے کی کوشش کے دوران ہلاک ہوگئے ہیں۔

اس کے بعد عراقیہ نیوز نے موصل کے قدیم شہر میں انسداد دہشت گردی سروس سے تعلق رکھنے والی فورسز کے دریائے دجلہ کے کنارے عراقی پرچم لہرانے کی خبر نشر کی تھی۔ عراقی حکومت نے موصل میں داعش کے خلاف لڑائی میں ہلاکتوں کے فوری طور پر اعداد وشمار جاری نہیں کیے ہیں۔تاہم امریکی محکمہ خارجہ کے ایک بیان کے مطابق عراق کی انسداد دہشت گردی فورس کا داعش کے خلاف لڑائی میں بھاری جانی نقصان ہوا ہے۔