.

حقیقی سند یعنی شہادت اسکولوں میں نہیں محاذ پر ملتی ہے: حوثی رہ نما

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن کے شمالی صوبے المحویت میں حوثی رہ نما اور شبام ضلعے میں محکمہ تعلیم کے ڈائریکٹر عبداللہ القاسمی نے انٹرمیڈیٹ کے طلبہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ امتحانات کے بعد لڑائی کے محاذوں کا رخ کریں۔ ضلعے میں امتحانی مراکز کے دورے کے دوران القاسمی نے طلبہ کو مخاطب کر کے کہا کہ "آپ لوگوں پر لازم ہے کہ لڑائی کے محاذوں کا رخ کریں۔ تعلیمی سند کی یہاں قیمت ہے مگر محاذ پر حقیقی سند یعنی شہادت ملتی ہے جو تمام تر اعزاز کی حامل ہے"۔

ادھر المحویت صوبے کے میڈیا سینٹر کا کہنا ہے کہ القاسمی کی طرف سے طلبہ کو نقل پر اکسانے اور انہیں لڑائی کے لیے جانے پر ابھارنے کے حوالے سے بہت سے طلبہ میں غم و غصے کی لہر دوڑ گئی۔

باغی ملیشیاؤں کی جانب سے تعلیمی عمل کے خلاف منفی کارستانیاں اور ، تعلیمی مستقبل کے ساتھ کھلواڑ اور نئی نسل کے مستقبل کو تباہ کرنے کی کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ ساتھ ہی وہ فرقہ واریت بھی پھیلا رہی ہیں۔

دوسری جانب تعلیمی ذرائع نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کو بتایا ہے کہ حوثی ملیشیا کی جانب سے ان تمام تر غیر قانونی اقدامات اور امتحان میں نقل کی حوصلہ افزائی کا مقصد یہ ہے کہ ضلعے میں تعلیمی محکمے کے اُن ڈائریکٹروں کو برطرف کرنے کا جواز پیدا کیا جائے جو حوثی ملیشیا سے تعلق نہیں رکھتے۔

مذکورہ ذرائع کے مطابق مطلوبہ تبدیلی یہ ہے کہ تعلیمی سیکٹر میں جو کوئی بھی حوثیوں سے تعلق نہیں رکھتا ہے اس کو نکال کر پھینک دیا جائے تا کہ باغیوں کی جانب سے فرقہ واریت اور مسلک کی بنیاد پر تعلیمی نصاب میں تبدیلی کی راہ ہموار کی جا سکے۔ اس منصوبے کا مقصد بچوں اور نوجوانوں کے ذہنوں کو گمراہی اور یمن میں عوامی سطح پر مسترد منحرف افکار کے ذریعے کنٹرول کیا جائے۔