.

سیاحت اور ہوابازی کو زندہ کرنے کے لیے قطر کا مفت ویزوں کا فیصلہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر کی جانب سے ویزا سے مستثنی 80 ممالک کی فہرست حیرت کا باعث ہے کیوں کہ اس میں درجنوں ممالک مثلا یورپی یونین کے ممالک ، امریکا ، کینیڈا اور نیوزی لینڈ کو تو پہلے ہی ویزے سے اسثنا حاصل تھا جب کہ یورپی اخبارات کے نزدیک دوحہ سیاحت کے حوالے سے کوئی پسندیدہ مقام نہیں ہے۔

یہ فہرست قطر میں سیاحت کے دم توڑ جانے اور ہوابازی کی سرگرمیاں مفلوج ہو جانے کے بعد سامنے آئی ہے۔

فہرست میں ویٹی کن ، سین میرینو ، موناکو ، انڈورا اور سیچیلیس جیسے چھوٹے ممالک بھی شامل ہیں جو سیاحوں کے حوالے سے نہیں جانے جاتے۔ قطری حکام نے نے نومبر 2016 میں دنیا کے تمام ملکوں کے شہریوں کو مفت ٹرانزٹ ویزا کی اجازت دی تھی۔ یہ پیش کش قطر ایئرویز استعمال کرنے والے مسافروں کو زیادہ سے زیادہ 96 گھنٹے گزارنے کا موقع فراہم کرتی ہے۔

یورپی اخبارات اور ویب سائٹوں نے قطر کی جانب سے 80 ممالک کے شہریوں کو ویزا سے مستثنی قرار دینے کے فیصلے کو موضوع بحث بنایا ہے۔ فرانسیسی اخبار لومونڈ کے نزدیک دوحہ اس فیصلے کے ذریعے سیاحت اور ہوابازی کے سیکٹروں کو پھر سے سرگرم کرنا چاہتا ہے جو پڑوسی ممالک کے بائیکاٹ کے سبب مشکلات سے دوچار ہیں۔ تاہم اخبار کے مطابق دبئی کے برخلاف قطر کسی طور بھی سیاحوں کے نزدیک کوئی پسندیدہ مقام نہیں ہے۔