.

یمن میں ہیضے کی وبا سے نمٹنے کے لیے 2 ارب ڈالر مختص

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ نے یمن میں ہیضے کی وبا کا مقابلہ کرنے کے لیے امدادی رقم میں اضافہ کر دیا ہے جس کے بعد اس کا حجم 2.37 ارب ڈالر تک پہنچ گیا ہے۔ اگرچہ یمن میں ہیضے کے پھیلنے کی وجہ سے صورت حال تشویش ناک ہے تاہم اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ ابھی تک منصوبے کی مطلوب رقم میں عطیہ دینے والے ممالک کی جانب سے صرف 33% حصہ پیش کیا گیا ہے جن میں سعودی عرب سرِفہرست ہے۔ اس کے بعد برطانیہ اور پھر متحدہ عرب امارات کا نمبر ہے۔

واضح رہے کہ یمن میں ہیضے کو پھیلنے سے روکنے کے لیے بین الاقوامی کوششیں جاری ہیں تا کہ لاکھوں لوگوں کو موت کے منہ میں جانے سے روکا جا سکے۔

اقوام متحدہ کی جانب سے مختص کی جانے والی 2 ارب ڈالر سے زیادہ کی رقم یمن میں تقریبا 1.2 کروڑ متاثرین کی ضروریات پوری کرے گی۔

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ صاف پانی اور طبی خدمات کے عدم میسّر ہونے کے سبب اس وقت یمن میں 2 کروڑ افراد ایسے حالات میں جی رہے ہیں جہاں ہیضہ بآسانی پھیل سکتا ہے جب کہ 1 کروڑ افراد کو فوری طور پر امداد کی ضرورت ہے تا کہ انہیں اس وبا سے بچایا جا سکے۔

ادھر عالمی ادارہ صحت کے مطابق یمن میں ہیضے سے متاثرہ افراد کی تعداد پانچ لاکھ تک پہنچ گئی ہے جب کہ ریکارڈ کی جانے والی اموات کی شرح میں بھی اضافہ ہو رہا ہے تاہم اس اضافے کی رفتار کم ہے۔