.

یمنی ارکان پارلیمنٹ کی سعودی ولی عہد سے ملاقات، عرب اتحاد کی ستائش

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمنی ارکان پارلیمنٹ نے صدر عبدربہ منصور ہادی کے اُن تمام اقدامات کے لیے اپنی سپورٹ اور تائید کا اظہار کیا ہے جو انہوں نے بغاوت کے خاتمے اور آئینی حکومت اور ریاست کے اداروں کی بحالی کے لیے کیے۔ اس کے علاوہ مذکورہ ارکان نے پڑوسی ممالک اور عالمی برادری کے ساتھ کی جانے والی کوششوں کو سراہا اور عوامی مزاحمت کاروں اور عرب اتحاد کے ممالک کی کوششوں کو گراں قدر قرار دیا۔

سعودی عرب کے ساحلی شہر جدہ میں منعقد ہونے والے مشاورتی اجلاس میں یمنی ارکان پارلیمنٹ نے عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ آئینی حکومت کے ساتھ کھڑی ہو اور ریاست کی بحالی کے لیے سپورٹ کرے۔ انہوں نے آئینی حکومت کے ساتھ کھڑے ہونے اور انسانی امداد پیش کرنے پر عوامی مزاحمت کاروں اور عرب اتحاد میں شامل ممالک کی کوششوں کو بھی سراہا جن میں سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات سرفہرست ہیں۔

خادم حرمین شریفین کے نائب شہزادہ محمد بن سلمان نے جدہ کے قصرِ سلام میں یمنی ارکان پارلیمنٹ کے وفد سے ملاقات کی۔ ملاقات میں یمن کی تازہ ترین صورت حال پر بات چیت ہوئی۔ سعودی مجلسِ شوری کے اسپیکر ڈاکٹر عبداللہ آل الشیخ نے یمنی عوام کے مسائل میں کمی لانے کے لیے شاہ سلمان انسانی امداد مرکز کی کوششوں کو بھرپور انداز سے سراہا۔

یمنی پارلیمنٹ کے ایک رکن محمد الشدادی نے اپنے خطاب میں کہا کہ اس امر پر سب کا اعتماد ہے کہ سعودی عرب کے زیر قیادت عرب اتحاد قومی فوج اور مزاحمت کاروں کی سپورٹ میں درست سمت میں چل رہا ہے تا کہ بقیہ یمنی اراضی کو بھی باغیوں کے قبضے سے آزاد کرا لیا جائے اور باغی ملیشیاؤں کی جنگ کے سبب تباہ حال علاقوں کی تعمیر نو کی جائے۔

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے جدہ میں داعش کے انسداد کے لیے امریکی نمائندے بیرٹ میکگورک سے بھی ملاقات کی۔ بات چیت میں مشرق وسطی کی صورت حال ، دہشت گردی کے انسداد کے لیے کی جا رہی کوششیں اور بین الاقوامی اتحاد کے ضمن میں سعودی عرب اور امریکا کے درمیان رابطہ کاری کے شعبے زیر بحث آئے۔