.

الرقہ کے ہزاروں محصورین کی زندگیاں خطرے میں ہیں:ایمنسٹی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ’ایمنسٹی انٹرنیشنل‘ نے ایک بیان میں خبردار کیا ہے کہ شام کے داعش کے زیرتسلط شہر الرقہ میں محصور ہزاروں عام شہریوں کی زندگیوں کو شدید خطرات لاحق ہیں۔

غیرملکی خبر رساں اداروں کی رپورٹس کے مطابق الرقہ میں ’داعش‘ کے خلاف امریکا کی قیادت میں جاری فوجی آپریشن میں سیکڑوں عام شہری مارے جا چکے ہیں جب کہ ہزاروں محصورین بمباری کے سائے میں ہیں۔ الرقہ میں داعش کے خلاف لڑائی کے آخرای مراحل میں وہاں پر موجود عام شہریوں کو لاحق خطرات غیرمعمولی طور پر بڑھ گئے ہیں۔

انسانی حقوق کی تنظیم کا کہنا ہے کہ شامی فوج اور اس کی حامی روسی فوج بلا تفریق الرقہ پرعام شہریوں کو نشانہ بنا رہی ہیں۔ الرقہ سے ملنے والی اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ اسدی فوج اور روسی فورسز کلسٹر بموں اور بیرل بموں سے عام آبادی کو نشانہ بنا رہی ہیں۔

عام شہری محصور

ایمنسٹی انٹرنیشنل کی جانب سے ’الرقہ کے شہری تمام اطراف سے آگ کے حصار میں ہیں‘ کے عنوان سے جاری کردہ رپورٹ میں خبردار کیا گیا ہے کہ داعش کے خلاف لڑائی کے دوران الرقہ میں بے گناہ شہریوں کی بڑے پیمانے پرہلاکتوں کا خدشہ ہے۔ رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ الرقہ میں ایک طرف داعش کے جنگجو ہیں اور دوسری طرف امریکا اور اس کی حمایت یافتہ ڈیموکریٹک فورسز، شامی اور روسی افواج ہیں۔ ان کے درمیان میں عام شہری پھنس کر رہ گئے ہیں۔

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم نے تمام متحارب فریقین سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ لڑائی کے دوران عام شہریوں کو نشانہ بنانے سے گریز کریں۔ وسیع پیمانے پر تباہی پھیلانے والا اسلحہ استعمال نہ کریں۔ گنجان آباد مقامات کو نشانہ نہ بنائیں اور جنگ کے دوران بلا تفریق بمباری سے اجتناب کریں۔

ایمنسٹی کا کہنا ہے کہ داعش نے الرقہ مین سنہ 2014ء کے بعد بڑے پیمانے پر بارودی سرنگیں بچھا رکھی ہیں۔ شہرکی شمالی سمت میں بچھائی گئی بارودی سرنگیں داعش کا دفاعی ہتھیار ہیں مگر ان سرنگوں کی مدد سے داعش عام شہریوں کی ڈھال کے طور پراستعمال کررہی ہے۔ اس کے علاوہ داعش کے نشانہ باز شہر سے فرار ہونے والے شہریوں کو گھات لگا کر بھی نشانہ بنا رہے ہیں۔