.

قطری میڈیا کی خلیج تعاون کونسل پر شدید نکتہ چینی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ نیوز چینل کے مطابق قطری میڈیا اس وقت خلیج تعاون کونسل کے کردار کی اہمیت کو کم کرنے کے لیے کوشاں دکھائی دے رہا ہے اور اس کا سارا زور اس امر پر ہے کہ قطر کے مفادات کی ضمانت نہ ہونے کے سبب دوحہ کونسل سے نکل جانے کا حق رکھتا ہے۔

یہ میڈیا مہم دوحہ میں ایران کے سابق سفیر عبداللہ سہرابی کے اس انکشاف کے ساتھ بیک وقت سامنے آئی ہے جس میں سہرابی نے بتایا تھا کہ امیرِ قطر برحان کے آغاز کے وقت سے ہی خلیج تعاون کونسل سے نکل جانے کا ارادہ رکھتے تھے مگر ان کے مشیروں نے انتظار کا مشورہ دیا۔

متحدہ عرب امارات کے وزیر مملکت برائے خارجہ امور انور قرقاش کی جانب سے قطر کو خلیج تعاون کونسل سے نکالے جانے کا اشارہ دیے جانے کے بعد دوحہ مکمل طور پر کونسل کے کردار اور مؤثر ہونے کی اہمیت کم کرنے پر کام کر رہا ہے۔ اسی حوالے سے کونسل کو مردہ لاش قرار دیا جا رہا ہے تا کہ قطر کے کونسل سے نکل جانے کے حق کا جواز پیش کیا جا سکے۔

قطری میڈیا بالخصوص پرنٹ میڈیا نے باور کرایا ہے کہ خلیج تعاون کونسل نے قطر اور اس کے سکیورٹی مفادات کے حوالے سے کچھ پیش نہیں کیا بلکہ کونسل حالیہ بحران کے حوالے سے ایک منفی کردار ادا کر رہی ہے۔ میڈیا کے مطابق دوحہ اپنی سکیورٹی کی ضمانت کے واسطے کونسل سے باہر کے ممالک مثلا ترکی اور امریکا پر انحصار کر رہی ہے اور کونسل سے اس کا نکل جانا ایک ممکنہ آپشن ہے۔