.

ایران نواز عراقی ملیشیا عصائب الحق نے کردستان کی علاحدگی مسترد کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں امریکی اور عراقی فوج کے خلاف برسرپیکار ایران نواز شیعہ ملیشیا عصائب اھل الحق کے کمانڈر قیس الخز علی کا کہنا ہے کہ اگر کردستان نے علاحدگی کا اعلان کیا تو اس کی سرحد سے باہر کردوں کے زیر نگیں علاقوں پر قبضہ کر لیا جائے گا۔

شیعہ ملیشیا عصائب اھل الحق دراصل عراق کے اہم شیعہ رہنما متقتدی الصدر کے منحرف ممبران پر مشتمل گروپ ہے، جسے ایران کی واضح حمایت حاصل ہے۔ عصائب کے کمانڈر قیس علی الخز نے نیم خودمختار صوبے کردستان کے وزیر اعلی مسعود بارزانی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ علاحدگی کے اعلان پر کردستان ملک بن جائے گا۔ دستور اور قانون کے مطابق جن جگہوں پر کرد ریاست وجود میں آئے گی، انہیں زیر قبضہ سمجھا جائے گا، کوئی عراقی یا ملک کا منتخب ایوان اس بات کو تسلیم نہیں کرے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ 25 ستمبر کو کردستان کی خودمختاری کے لئے ہونے والے ریفرینڈم کے نتائج کے ہم پابند نہیں ہوں گے کیونکہ وہ کرد صوبے کی تین گورنریوں اریبل، سلیمانیہ اور دھوک کے باسیوں کی رائے کا عکاس ہو گا۔ دوسرے علاقوں کے باسیوں کے بارے میں معلوم ہو سکے گا کہ وہ عراق سے علاحدگی چاہتے ہیں یا نہیں۔