.

اسرائیلی فوج کی کارروائی میں زخمی فلسطینی نوجوان چل بسا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مقبوضہ مغربی کنارے کے شہر بیت لحم کے نزدیک ایک مہاجر کیمپ میں گذشتہ ماہ اسرائیلی فوج کی چھاپا مار کارروائی میں شدید زخمی ہونے والا فلسطینی نوجوان جان کی باز ی ہار گیا ہے۔

فلسطینی اتھارٹی کے قیدیوں کے امور کے سربراہ عیسیٰ قراقع نے اتوار کے روز ایک بیان میں بتایا ہے کہ اسرائیلی فوج نے اگست کے اوائل میں الدھیشہ کے مہاجر کیمپ میں اکیس سالہ رائد الصالحی کی گرفتاری کے لیے کارروائی کی تھی اور اس دوران میں اس کو قریب سے پانچ گولیاں مار دی تھیں۔

عیسیٰ قراقع کا کہنا ہے کہ یہ فلسطینی نوجوان اسرائیل کے ایک اسپتال میں تب سے زیر علاج تھا اور آج وہ وہاں اپنے زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا ہے۔اسرائیلی فوج نے فوری طور پر اس کی موت کے بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا ہے۔

واضح رہے کہ دریائے اردن کے مقبوضہ کنارے میں اکتوبر 2015ء سے تشدد کا سلسلہ جاری ہے۔ اس کے بعد سے اب تک 294 فلسطینیوں کو اسرائیلی فورسز نے اسی طرح کے واقعات یا کریک ڈاؤن کارروائیوں میں شہید کردیا ہے جبکہ فلسطینیوں کے مشتبہ چاقو یا کار حملوں میں47 اسرائیلی ہلاک ہوچکے ہیں۔ان کے علاوہ تشدد کے ان واقعات میں سات غیر ملکی بھی مارے گئے ہیں ۔ ان میں دو امریکی ، دو اردنی ،ایک ایریٹیرین ، ایک برطانوی اور ایک سوڈانی شہری تھا۔