.

اسرائیلی رکن پارلیمنٹ کا رقم کے عوض فلسطینیوں کی ہجرت کا منصوبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی پارلیمنٹ کے رکن Bezalel Samotrich نے ایک نئے سیاسی منصوبے کی تجویز دی ہے۔ تجویز میں کہا گیا ہے کہ ایک حکومتی طریقہ کار وضع کیا جائے جس کے تحت 1948 کے عربوں اور مغربی کنارے کے فلسطینیوں کو "رضاکارانہ ہجرت" پر حوصلہ افزائی کے لیے بھاری معاوضوں کی ادائیگی کی جائے۔

بدھ کے روز ایک اسرائیلی اخبار سے گفتگو میں سیموٹرچ نے کہا کہ "یہ کسی قسم کی منتقلی نہیں ہے۔ آج 20 ہزار فلسطینی ہر سال مغربی کنارہ چھوڑ کر جا رہے ہیں۔ ان کے اپنے سروے یہ ظاہر کر رہے ہیں کہ 30% لوگ ہجرت کے خواہش مند ہیں۔ میں ان کی خواہش پورا کرنے میں ان کی مدد کرنا چاہتا ہوں وہ بھی منصفانہ صورت میں اور مکمل مالی معاوضے کے ساتھ نہ کہ جبری طور پر۔ یقینا یہ منصوبہ ہر چند برس بعد ہونے والی جنگوں اور فوجی آپریشنوں کے مقابلے میں اخراجات کے لحاظ سے ہمارے لیے سستا ثابت ہو گا"۔

منصوبے میں "فلسطینی اتھارٹی کو ختم کر کے مغربی کنارے کے تمام علاقوں میں اسرائیلی قانون نافذ کرنے اور مغربی کنارے میں یہودی بستیوں کی تعداد تین گُنا زیادہ کر دینے کی بھی تجویز دی گئی ہے"۔ اس طرح خاص طور پر ذہنوں سے اور زمینی طور پر فلسطینی ریاست کے نمونے کو مٹایا جا سکے گا۔

سیموٹرچ کے مطابق " دہشت گردی کا محرّک نا امیدی نہیں بلکہ امید ہے جو بنیادی طور پر فلسطینی ریاست کے قیام کی عکاسی کرتی ہے.. میں اس امید کو جڑ سے اکھاڑ دینا چاہتا ہوں"۔

سیموٹرچ نے سیاسی قیادت کی جانب سے جاری کیے جانے والے فوجی احکامات کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ "فوج کے لیے ممکن نہیں ہے کہ ایک ایسے علاقے میں دہشت گردی پر قابو پا سکے جہاں امید نے گھر کر لیا ہے اور اس امید سے سارا وقت دہشت گردی جنم لیتی رہتی ہے"۔

سیموٹرچ کے منصوبے میں مغربی کنارے کے ایسے فلسطینیوں کو (اسرائیلی پارلیمنٹ میں ووٹ کے حق کے سوا) بہت سے شہری حقوق کی پیش کش کی گئی ہے جو اسرائیل کی اراضی پر اپنی قومی خواہشات سے دست بردار ہو جائیں گے۔

یہ تجویز بھی ہے کہ ملک میں باقی رہ جانے والوں کا 30 سال تک حقیقی چال چلن اور برتاؤ جانچا جائے گا اور پھر ضابطے کے مطابق انہیں بتدریج دیگر حقوق اور اختیارات پیش کیے جائیں گے۔ ان میں اسرائیلی پارلیمنٹ کے لیے ووٹ کا حق بھی شامل ہو گا تاہم شرط یہ ہے کہ یہ افراد دیگر اقلیتوں کی طرح اسرائیلی فوج میں اپنی خدمات سر انجام دیں۔