یونی ورسٹی کی رقم کی چوری میں ملوث حوثی وزارت مالیات کا سکریٹری !

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

حوثی ملیشیا نے اپنی حکومت میں ایک رہ نما کو وزارت مالیات کا سکریٹری مقرر کیا ہے جس پر اِب یونی ورسٹی کے خزانے سے رقم چوری کرنے کا الزام ہے۔ واضح رہے کہ حوثیوں کی یہ حکومت بین الاقوامی سطح پر غیر تسلیم شدہ ہے۔

صنعاء میں باغی اتحاد کی سپریم سیاسی کونسل کے سربراہ صالح الصماد نے حوثی رہ نما اور اِب یونی ورسٹی کے استاد "اکرم الوشلی" کے وزارت مالیات میں بطور سکریٹری تقرر کا فیصلہ جاری کیا۔

یاد رہے کہ اکرم محمد علی الوشلی پر جن کو اس سے پہلے اِب یونی ورسٹی کے چیئرمین کا نائب مقرر کیا گیا تھا.. 2016 کے اواخر میں یونی ورسٹی کے خزانے سے بھاری رقم کی چوری میں ملوث ہونے اور کارروائی میں سہولت کار بننے کا الزام عائد کیا گیا تھا۔ یہ صوبے میں مالی رقوم کی چوری کی سب سے بڑی کارروائی تھی۔

اِب یونی ورسٹی کے ذرائع کے مطابق یونی ورسٹی کے خزانے سے چوری کے عمل میں حوثی رہ نما الوشلی کے ملوث ہونے کے شواہد ملنے کے بعد حوثیوں کی طرف سے جاری احکامات پر اس مجرمانہ کارروائی کی تحقیقات روک دی گئیں اور اس معاملے کو دفن کر دیا گیا۔

گزشتہ برس دسمبر کے اواخر میں اِب یونی ورسٹی کے خزانے میں چوری کی منظم کارروائی عمل میں آئی جس کے پیچھے یونی ورسٹی کے اندر کے افراد کا ہاتھ تھا۔ خزانے میں موجود مجموعی طور پر 27 کروڑ یمنی ریال لُوٹے جانے کا اعلان کیا گیا جن میں امریکی ڈالر کی صورت میں کرنسی بھی شامل تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں