.

بحران کے حل کے لیے مذاکرات کی میز پر آنے کو تیار ہیں : امیرِ قطر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطر کے امیر شیخ تمیم بن حمد آل ثانی کا کہنا ہے کہ دوحہ مذاکرات کی میز پر بیٹھنے اور بحران پر بات چیت کے لیے تیار ہے۔ انہوں نے ایک ایسے حل تک پہنچنے کی امید ظاہر کی جس پر "سب راضی" ہوں گے۔ امیر قطر نے یہ بات جمعے کے روز برلن می جرمن چانسلر اینگلا مرکل کے ساتھ ایک پریس کانفرنس میں کہی۔

شیخ تمیم نے واضح کیا کہ "دہشت گردی کی تشخیص کے حوالے سے ہمارا عرب ممالک کے ساتھ اختلاف ہے"۔


اس موقع پر اینگلا مرکل نے باور کرایا کہ "برلن کسی ایک جانب نہیں کھڑا ہو گا۔ ہم مملکت سعودی عرب اور امارات کے ساتھ رابطے میں ہیں"۔ انہوں نے اس امر پر اپنی تشویش کا اظہار کیا کہ ابھی تک قطر کے اپنے پڑوسی ممالک کے ساتھ بحران کا حل سامنے نہیں آیا ہے۔

اس سے قبل جمعرات کو امیر قطر نے انقرہ میں ترکی کے صدر رجب طیب ایردوآن کے ساتھ بات چیت کی۔ یہ دوحہ اور عرب ممالک کے درمیان بحران کے جنم لینے کے بعد امیر قطر کا پہلا بیرونی دورہ تھا۔ بعد ازاں شیخ تمیم نے اینگلا مرکل سے ملاقات کے لیے برلن کا رخ کیا۔ جرمنی کے بعد وہ پیرس میں فرانسیسی صدر امانوئل ماکروں سے ملاقات کریں گے۔