.

عراق : انبار کے مغربی علاقوں کو واپس لینے کے لیے فوجی آپریشن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں مشترکہ آپریشنز کی کمان نے اعلان کیا ہے کہ مغربی عراق میں شام کی سرحد کے نزدیک داعش تنظیم کے زیر قبضہ علاقوں کو واپس لینے کے لیے ابتدائی عسکری کارروائیوں کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

یہ علاقہ انبار صوبے میں رمادی شہر سے 310 کلومیٹر مغرب میں واقع ہے جس پر 2014 کے اوائل میں شدت پسندوں نے قبضہ کر لیا تھا۔ اس علاقے میں تنظیم کے اسلحہ ڈپو ، تربیتی کیمپ ، دھماکا خیز آلات تیار کرنے کے ورکشاپ اور کمانڈ اینڈ کنٹرول مرکز موجود ہے۔

عسکری آپریشن کے آغاز سے قبل عراقی فضائیہ کے طیاروں نے انبار صوبے کے مغربی علاقوں عکاشات ، عنہ ، راوہ اور القائم میں ہزاروں پمفلٹ گرائے جن میں مقامی آبادی کے لیے ہدایات کے علاوہ آپریشن کے جلد شروع ہونے کے بارے میں مطلع کیا گیا۔ پمفلٹ میں شدت پسند عناصر کو خبردار کرتے ہوئے ان سے مطالبہ کیا کہ وہ خود کو منصفانہ عدالتی کارروائی کے لیے پیش کردیں یا پھر مسلح افواج کے ہاتھوں موت کا شکار بنیں۔

ادھر الرطبہ ضلعے کے ڈپٹی کمشنر عماد مشعل نے بتایا کہ عکاشات کا علاقہ داعش تنظیم کے لیے اہم شمار کیا جاتا ہے جس کو تنظیم شہر اور اس کے اطراف عسکری ٹکڑیوں کو حملوں کا نشانہ بنانے کے لیے استعمال کر رہی ہے۔ مشعل کے مطابق اس علاقے کا آزاد کرایا جانا الرطبہ میں شہریوں اور سکیورٹی اداروں کے خلاف دہشت گرد حملوں پر روک لگانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔

عراقی فورسز بین الاقوامی اتحاد کی سپورٹ کے ساتھ انبار صوبے کے زیادہ تر شہروں کو واپس لینے میں کامیاب ہو چکی ہیں ، ان شہروں پر داعش تنظیم نے 2014 میں قبضہ کر لیا تھا۔ تاہم شامی سرحد کے نزدیک واقع کئی شہروں پر اب بھی شدت پسندوں کا کنٹرول ہے۔