.

شاہی خاندان کی کئی شخصیات نے بیان کا خیر مقدم کیا ہے : شیخ عبدالله آل ثانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

قطری شاہی خاندان کے اہم رہ نما شیخ عبداللہ بن علی آل ثانی کا کہنا ہے کہ قطری بحران پر خاموشی ہمارے ملک اور ہم وطنوں کے لیے رُسوائی کا باعث ہے۔ انہوں نے یہ بات "العربیہ" کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہی۔

عبداللہ آل ثانی نے بتایا کہ خاندان کی کئی شخصیات نے ان کے بیان کا مثبت جواب دیتے ہوئے اس کا خیر مقدم کیا ہے۔ انہوں نے باور کرایا کہ شیخ مبارک بن خلیفہ بن سعود آل ثانی نے بیان کو بے حد سراہا ہے۔

شیخ عبداللہ بن علی آل ثانی نے اتوار کے روز جاری اپنے ایک بیان میں قطر کے بحران کو زیر بحث لانے اور امور کو بحال کرنے کے لیے خاندانی اور قومی سطح کے ایک اجلاس کا مطالبہ کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ "ہم پر لازم ہے کہ اس بحران میں خاموشی اختیار نہ کریں"۔

شیخ عبداللہ بن علی آل ثانی نے مزید کہا کہ "صورت حال بد سے بدتر ہوتی جا رہی ہے جس کو دیکھ کر مجھے بہت دکھ ہوتا ہے۔ براہ راست اشتعال انگیزی خلیج عربی کے استحکام پر اثر انداز ہو رہی ہے اور نوبت دوسروں کے امور میں مداخلت تک پہنچ چکی ہے۔ یہ حالات ہمیں ایسے انجام کی جانب دھکیل رہے ہیں جو ہم نہیں چاہتے۔ جیسا کہ بعض ممالک کا حال ہے جو مہم جوئی کی سرنگ میں داخل ہوئے اور ان کا انجام انارکی ، بد حالی اور صلاحیتوں کی بربادی کی صورت میں سامنے آیا"۔