.

ریفرنڈم کے عدم انعقاد کے لیے بارزانی کی دانش مندی کے خواہاں ہیں : سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزارت خارجہ کی جانب سے جاری ایک بیان میں عراقی فریقوں سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ عوام کے تمام تر مفادات کو یقینی بنانے کے واسطے بات چیت کریں۔

بیان میں باور کرایا گیا ہے کہ یہ بات چیت عراق میں امن اور سلامتی کی ضامن ہو گی اور اس کی وحدت و خود مختاری برقرار رکھے گی۔ بیان میں کردستان کے حکام سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ ریجن کو حاصل ہونے والی منفعتوں کی حفاظت کرے۔

سعودی وزارت خارجہ کے بیان میں عراقی فریقوں سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ دستخط شدہ معاہدوں اور عراقی آئین کے مندرجات کی طرف لوٹیں۔ بیان کے مطابق کردستان میں ریفرنڈم کے نہ ہونے سے عراق اور خطہ بہت سے خطرات سے اجتناب میں کامیاب ہو جائے گا۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ مملکت اس وقت صدر بارزانی کی دانش مندی کی راہ دیکھ رہی ہے کہ وہ کردستان کی علاحدگی کے حوالے سے ریفرنڈم نہ کرائیں۔

بیان میں یہ بھی خبردار کیا گیا کہ عراق میں کوئی بھی یک طرفہ اقدام علاقائی صورت حال کی پیچیدگی میں اضافہ کر دے گا۔