عراقی پارلیمنٹ کا مسعود بارزانی کے خلاف عدالتی کارروائی کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

عراقی کردستان میں علاحدگی سے متعلق ہونے والے ریفرنڈم کے پس منظر میں بغداد اور اربیل کے درمیان اقدامات کی دوڑ سنگین ہوتی جا رہی ہے۔ اس سلسلے میں بدھ کے روز عراقی پارلیمنٹ نے عراقی کردستان کے صدر مسعود بارزانی کے خلاف عدالتی کارروائی کا مطالبہ کیا۔ ارکان پارلیمنٹ کا یہ بھی مطالبہ ہے کہ حکومت دیگر ممالک کے سفیروں کو آگاہ کرے کہ کردستان میں ان ممالک کے سفارتی مشنوں کو بند کیے جانے کی ضرورت ہے۔

عراقی پارلیمنٹ نے حکومت پر زور دیا ہے کہ کرکوک میں آئل فیلڈز کو واپس لیا جائے تا کہ اس پر اتحادی حکام کا کنٹرول ہو۔
عراقی وزیراعظم حیدر العبادی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ہم قانون اور آئین کی طاقت سے کردستان میں اتحادی حکام کی حکمرانی نافذ کریں گے۔

العبادی اس سے پہلے کردستان سے یہ مطالبہ کر چکے ہیں کہ وہ خود مختاری ریفرنڈم کے نتائج کو منسوخ کرے تا کہ اربیل اور بغداد کے درمیان معلق مسائل کا حل تلاش کرنے کے واسطے بات چیت شروع ہو سکے۔

العبادی نے پیشمرگہ کُرد فورسز نے بھی مطالبہ کیا کہ وہ متنازع علاقوں سے نکل جائیں۔ عراقی وزیراعظم کا اشارہ تیل سے مالا مال شہر کرکوک کی جانب تھا۔ واضح رہے کہ عراقی پارلیمنٹ اس علاقے میں فوج بھیجنے کے حوالے سے اختیارات العبادی کو سونپ چکی ہے۔

عراقی پارلیمنٹ کے خصوصی اجلاس کے دوران العبادی نے کہا کہ ریفرنڈم کو منسوخ کرنا اور آئین کے تحت بات چیت شروع کرنا نا گزیر ہے۔

بغداد حکومت نے کردستان کے خلاف اپنے اقتصادی اقدامات کو متحرک کرنا شروع کر دیا تھا۔ عراقی شہری ہوابازی کی اتھارٹی نے غیر ملکی فضائی کمپنیوں کو آگاہ کر دیا کہ آئندہ جمعے کے روز سے کردستان کے لیے پروازیں معطل کر دی جائیں۔ اس سلسلے میں الشرق الاوسط فضائی کمپنی نے اعلان کیا کہ وہ جمعے کے روز سے شمالی عراق کے لیے اپنی پراوزیں روک دے گی۔

ادھر عراقی کردستان کی حکومت کے وزیر ٹرانسپورٹ نے ریجن کے ہوائی اڈوں سے بین الاقوامی فضائی سفر کی ممانعت کے حوالے سے بغداد حکومت کی دھمکیوں کو مسترد کر دیا۔ مذکورہ وزیر کے مطابق داعش کے خلاف جنگ میں اربیل کا بین الاقوامی ہوائی اڈہ بے حد ضروری ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں