ڈرائیونگ کے لیے خواتین کی کم سے کم عمر 18 سال مقرر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے ترجمان میجر جنرل منصور الترکی نے کہا ہے کہ خواتین کی ڈرائیونگ کے حوالے سے قانون سازی اور ضابطہ اخلاق تیار کیا جا رہا ہے۔ گاڑی چلانے کے مجاز خواتین کی کم سے کم عمر اٹھارہ سال مقرر کی گئی ہے۔

’العربیہ‘ چینل سے بات کرتے ہوئے منصور الترکی نے کہا کہ خواتین کی ڈرایئونگ کی اجازت دینے کا فیصلہ واضح، ٹریفک قوانین پر عمل درآمد کے مطابق ہے۔ دنیا بھر کی طرح سعودی حکومت نے بھی ڈرائیونگ کے لیے مرد اور عورت دونوں کے لیے کم سے کم عمر کی حد اٹھارہ سال مقرر کی ہے۔ اٹھاہ سال کی عمر کے افراد ڈرائیونگ لائسنس حاصل کرسکیں گے۔

ایک سوال کے جوب میں ترجما وزات داخلہ نے کہا کہ ٹریفک پولیس کے ساتھ تمام شہروں میں سڑکوں پر پولیس تعینات رہے گی۔ سیکیورٹی حکام ڈرائیونگ کے دوران خواتین کو درپیش مشکلات کے حل میں ان کی مدد کریں گے۔

قبل ازیں سعودی وزیر داخلہ شہزادہ عبدالعزیز بن سعود بن نایف نے کہا کہ سکیورٹی سروسز مملکت بھر میں مرد اور خواتین پر ٹریفک قوانین کے یکساں اطلاق کے لیے تیار ہیں۔

انھوں نے جمعرات کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ ’’ خواتین کی محفوظ طریقے سے گاڑیاں چلانے کے لیے رہ نمائی کی جائے گی اور ا ن کی ڈرائیونگ کو ایک تعلیمی عمل میں تبدیل کردیا جائے گا۔اس سے حادثات کی صورت میں ہونے والے جانی اور مالی نقصانات میں بھی کمی واقع ہوگی‘‘۔

انھوں نے مزید کہا ہے کہ ’’ٹریفک کی تصریحات کے مردوں اور خواتین دونوں پر اطلاق کے لیے جاری کردہ نیا فرمان خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کا ایک تاریخی اقدام ہے‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں