.

ٹرمپ ایرانی پاسداران انقلاب کو دہشت گرد تنظیم کب قرار دیں گے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی اخبار "فنانشل ٹائمز" کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ رواں ہفتے کے آخر میں جوہری معاہدے کے انجام کے حوالے سے اپنے فیصلے کے اعلان کے موقع پر ایرانی پاسداران انقلاب تنظیم کو دہشت گرد قرار دیں گے۔

اخبار کا کہنا ہے کہ پاسداران انقلاب کو دہشت گرد تنظیموں میں شامل کرنا ایران اور خطے کا امن برباد کرنے کے حوالے سے تہران کی کارروائیوں کے خلاف امریکا کی پُرعزم حکمت عملی کا حصہ ہے۔

امریکی صدر ایران کے بارے میں اپنے نئے فیصلے کا اعلان 12 اکتوبر بروز جمعرات کریں گے۔ واضح رہے کہ ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کا جائزہ لینے کے لیے امریکی صدر کو دی گئی تین ماہ کی مہلت اس روز اختتام پذیر ہو رہی ہے۔

ٹرمپ نے جمعے کے روز وہائٹ ہاؤس میں سینئر عسکری قیادت کے ساتھ اجلاس کے دوران اعلان کیا تھا کہ ایران نے عالمی طاقتوں کے ساتھ طے پانے والے جوہری معاہدے کا احترام نہیں کیا۔ امریکی صدر کے نزدیک خطے میں دہشت گردی اور شدت پسند ملیشیاؤں کے لیے ایرانی پاسداران انقلاب کی سپورٹ جوہری معاہدے کی روح کی اہم ترین پامالیوں میں سے ہے۔

کانگریس کی قرار دادH.R.478 امریکی صدر کو پابند بناتی ہے کہ وہ ایگزیکیٹو آرڈر 13224 کے سیکشن 1(b) کے تحت پاسداران انقلاب پر پابندیاں عائد کرنے سے متعلق قانون منظور ہونے کے بعد 30 دن کے اندر مذکورہ ایرانی تنظیم کو دہشت گرد قرار دینے کا اعلان کریں۔ یہ ایگزیکیٹو آرڈر 24 ستمبر 2001 کو جاری کیا گیا تھا۔

علاوہ ازیں قرار دادH.R.380 میں ایرانی پاسداران انقلاب کا تعارف ایک دہشت گرد ادارے کے طور پر کرایا گیا ہے۔ اس کے تحت امریکی وزارت خارجہ کو اس بات کا مکلف ٹھہرایا جائے گا کہ وہ کانگریس سے منظوری کے بعد پاسداران انقلاب کو دہشت گرد تنظیموں کی فہرست میں شامل کیے جانے کے بارے میں ایک رپورٹ پیش کرے۔