.

ایرانی ٹیلی وژن کا رپورٹر اٹلی میں گرفتار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی ٹیلی وژن کے ایک اعلان کے مطابق اٹلی میں اس کے ایک رپورٹر حمید معصومی نجاد کو جمعے کی صبح میلان کے ہوائی اڈے پر گرفتار کر لیا گیا۔

ادھر ایرانی نشریاتی ادارے کی خبر رساں ایجنسی"IRIB" نے بتایا ہے کہ مذکورہ رپورٹر ایران میں اپنے ایک عزیز کی تدفین میں شرکت کے لیے تہران روانہ ہونے کے لیے ہوائی اڈے پہنچا تھا۔ تاہم اسے نامعلوم وجوہات کی بنا پر حراست میں لے لیا گیا۔

برطانوی دارالحکومت سے شائع ہونے والے فارسی اخبار "کیہان لندن" کے مطابق معصومی نجاد اس سے قبل بھی ایران اسلحہ اسمگل کرنے اور ایرانی انٹیلی جنس اداروں میں ایک اعلی اہل کار کے طور پر کام کرنے کے الزامات میں اطالوی حکام کے ہاتھوں گرفتار ہو چکا ہے۔

اخبار کا کہنا ہے کہ معصومی نجاد 2010 میں دو ماہ تک اطالوی سکیورٹی اداروں کے زیر حراست رہا۔ بعد ازاں ایران کی جانب سے اطالوی رپورٹروں کے ساتھ اسی سے ملتا جلتا برتاؤ کرنے کی دھمکی پر معصومی کو رہا کر دیا گیا۔

اخبار کے مطابق معصومی نجاد غیر سرکاری طور پر ایرانی ٹیلی وژن کے لیے کام کرتا ہے اور وہ ٹی وی رپورٹوں کی تیاری کے دوران مضحکہ خیز کلپوں کے حوالے سے مشہور ہے۔