.

یمن میں دو روز میں 2 "ایرانی حوثی" جاسوس ڈرون مار گرائے گئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمنی فوج نے منگل کے روز انکشاف کیا ہے کہ ملک کے جنوب میں مریس کے محاذ پر حوثیوں باغیوں کا ایک ڈرون طیارہ مار گرایا گیا۔ چند گھنٹوں کے دوران یہ اپنی نوعیت کا دوسرا واقعہ ہے۔ اس سے پہلے البیضاء میں بھی ایک ڈرون طیارہ مار گرایا گیا تھا۔

لندن میں "مسلح تنازعات سے متعلق تحقیقی مرکز" نے اتوار کے روز اپنی ایک بین الاقوامی رپورٹ میں حوثیوں کے اس دعوے کا پول کھول دیا تھا کہ یہ طیارے مقامی طور پر تیار کردہ ہیں۔ رپورٹ میں تصدیق کی گئی کہ یہ عسکری ٹکنالوجی ایرانی ساخت کی ہے۔

یمنی فوج کی سرکاری نیوز ویب سائٹ کے مطابق قومی فوج نے پیر کے روز ملک کے جنوبی صوبے الضالع میں مریس کے محاذ پر باغیوں کے زیر استعمال ایک ڈرون طیارے کو مار گرایا۔ یہ طیارہ قومی فوج کے ٹھکانوں کی جاسوسی کے واسطے استعمال کیا جا رہا تھا۔

اس سے قبل یمن کے وسطی صوبے البیضاء میں عوامی مزاحمت کاروں نے پیر کے روز اعلان کیا کہ وہ باغی حوثی ملیشیاؤں کا ایک جاسوس ڈرون طیارہ مار گرانے میں کامیاب ہو گئے۔ طیارے کو القریشیہ گورنری میں قیفہ کے محاذ پر گرایا گیا۔

ماضی میں بھی یمن کی سرکاری فوج اور عوامی مزاحمت کار مختلف محاذوں پر اس نوعیت کے درجنوں طیارے مار گرا چکے ہیں جن کو حوثی باغی سرکاری فوج کے ٹھکانوں کی تصاویر لینے کے واسطے استعمال کرتے ہیں۔

لندن میں "مسلح تنازعات سے متعلق تحقیقی مرکز" کے مطابق مذکورہ ڈرون طیاروں کی ٹکنالوجی ایران سے دور مار کرنے والے بیلسٹک میزائلوں سمیت دیگر ہتھیاروں کے ساتھ حوثیوں کو اسمگل کی گئی۔