.

اقوام متحدہ کا مشرقی الغوطہ سے 400 مریضوں کے فوری انخلا کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ نے شام کے دارالحکومت دمشق کے نواح میں واقع محاصرہ زدہ علاقے مشرقی الغوطہ سے فوری طور شدید بیمار 400 سے زیادہ مریضوں کے انخلا کا مطالبہ کیا ہے اور کہا ہے کہ انھیں اسپتالوں میں منتقل کرنے کے لیے فوری طور پر کوئی کارروائی نہیں کی جاتی تو ان میں 29 افراد کی جانیں جاسکتی ہیں۔ان میں 18 بچے بھی شامل ہیں۔

اقوام متحدہ کے تحت جنیوا میں قائم انسانی حقوق کونسل نے ایک بیان میں کہا ہے کہ بین الاقوامی قانون کے تحت شامی حکومت مشرقی الغوطہ میں موجود مریضوں کے علاج کی ذمے دار ہے۔وہ انھیں ضروری ادویہ اور خوراک مہیا کرنے کی بھی ذمے دار ہے۔

اقوام متحدہ کے انسانی امور کے مشیر برائے شام جان ایجلینڈ نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’قریباً چار سو مرد وخواتین اور بچوں کو فوری طور پر مشرقی الغوطہ سے نکالا جانا چاہیے‘‘۔ان کا کہنا ہے کہ ہم موجودہ صورت حال کو جاری نہیں رکھ سکتے اور اگر درکار امداد مہیا نہیں کی جاتی تو شامی فوج کے محاصرے کا شکار مشرقی الغوطہ میں قریباً چار لاکھ شہری انسانی المیے سے دوچار ہو جائیں گے۔

انھوں نے جمعرات کو نیوز کانفرنس میں کہا تھا کہ مشرقی الغوطہ کی ناکا بندی کی وجہ سے پہلے ہی سات افراد جان کی بازی ہا ر چکے ہیں کیونکہ انھیں علاج کے لیے کہیں اور منتقل نہیں کیا جا سکا تھا۔