.

عراق کو کس نے ایک کھرب امریکی ڈالرز سے زاید کا ٹیکا لگایا؟

شدت پسند گروپ داعش نے عراق کا اقتصادی اور بنیادی ڈھانچہ بری طرح تباہ کیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے وزیراعظم نے شدت پسند گروپ ’داعش‘ کے قبضے کے نتیجے میں ملک کو پہنچے والے معاشی اور اقتصادی نقصانات کا تخمینہ ایک کھرب ڈالر سے زاید قرار دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ داعش کے ہاتھوں ملک کو بھاری اقتصادی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔

جنوبی شہر کربلا کے دورے کے دوران ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے حیدر العبادی نے کہا کہ داعش کے قبضے کے دوران ملک کے اقتصادی ڈھانچے کو پہنچنے والا نقصان ہمارے اندازوں اور تخمینوں سے کہیں زیادہ ہے۔ داعش نے عراق کے شہروں پر قبضہ کرکے ملک کو ایک سو ارب ڈالر سے زاید کی پھکی لگائی ہے اور بنیادی ڈھانچہ تباہ کردیا گیا۔

خیال رہے کہ سنہ 2014ء میں عراق میں شدت پسند گروپ داعش نے ڈرامائی پیش رفت کے دوران عراق کے وسیع وعریض علاقے پر قبضہ کرلیا تھا۔ ایک اندازے کے مطابق داعش نے ایک تہائی عراق پر اپنا کنٹرول قائم کرلیا تھا۔ گذشتہ برس شروع ہونے والے عراقی فوج کے آپریشن میں اب تک قریبا 97 فی صد علاقے داعش کے قبضے سے وا گذار کرائے گئے ہیں۔