.

لبنان : حریری کی جماعت کی طرف سے خطے میں ایرانی مداخلت مسترد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں مستعفی وزیراعظم سعد حریری کی سیاسی جماعت "المستقبل موومنٹ" نے اُن تمام مہموں کی مذمت کی ہے جن کا مقصد مملکت سعودی عرب کو نشانہ بنانا ہے۔ موومنٹ نے عرب ممالک کے امور میں ایرانی مداخلت پر بھی سخت برہمی کا اظہار کیا ہے۔

ہفتے کے روز جاری ایک بیان میں المستقبل موومنٹ نے سعد حریری کی قیادت پر مکمل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے بتایا کہ پارٹی سربراہ کی وطن واپسی کا انتظار ہے تا کہ وہ اپنی قومی ذمے داریاں پوری کریں اور ملک کو درپیش خطرات سے بچانے میں اپنا کردار ادا کریں۔

المستقبل موومنٹ نے ایک مرتبہ پھر برادر عرب ممالک کے امور میں ایران کی مداخلت کو سختی سے مسترد کرتے ہوئے اسے خطے میں تنازعات اور جنگیں بھڑکانے کا عامل شمار کیا۔

بیان میں یمن میں ایران کے آلہ کاروں کی جانب سے مملکت پر کیے جانے والے حملوں کی بھی مذمت کرتے ہوئے خبردار کیا گیا کہ ایرانی پالیسیوں کے خطرناک نتائج تہران کے سامنے آئیں گے۔

ادھر لبنانی فورسز پارٹی کے سربراہ سمیر جعجع نے ہفتے کے روز اپنی ٹوئیٹ میں کہا کہ "وہ تمام لوگ جو سعد حریری کے 8 مارچ کے اتحاد میں نہ ہونے پر آنسو بہاتے ہیں ، اگر وہ واقعتا اُن کی لبنان واپسی چاہتے ہیں تو خطے کے بحرانات سے نکلنا ہو گا"!.

دوسری جانب حزب اللہ کے سکریٹری جنرل حسن نصر اللہ نے جمعے کے روز سعودی عرب کو لبنان کے معاملات میں مداخلت کا مورود الزام ٹھہراتے ہوئے ایک مرتبہ پھر ریاض پر نکتہ چینی کی۔ نصر اللہ نے اپنے خطاب میں مستعفی وزیراعظم سعد حریری کے ساتھ یک جہتی کا اظہار کیا۔ واضح رہے کہ گزشتہ چند ماہ کے دوران فریقین کے درمیان تعلقات پر تنقیدی سلسلہ چھایا رہا۔