.

سعودی شاہ اور ولی عہد کی مصر میں دہشت گردی کے واقعے کی شدید الفاظ میں مذمت

سعودی عرب کسی بھی خطرے کے مقابلے میں مصر کے ساتھ کھڑا ہے: صدر عبدالفتاح السیسی کے نام تعزیتی پیغامات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے مصر کے علاقے شمالی سیناء میں ایک مسجد میں دہشت گردی کے حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کی ہے اور صدر عبدالفتاح السیسی سے اس اندوہناک واقعے میں قیمتی انسانی جانوں کے ضیاع پر گہرے دُکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔

انھوں نے صدر السیسی کے نام بھیجے گئے اپنے تعزیتی پیغام میں کہا ہے کہ ’’ہمیں شمالی سیناءمیں ایک مسجد پر دہشت گردی کے حملے اور اس میں انسانی جانوں کے ضیاع کی خبر سن کر گہرا دکھ اور صدمہ پہنچا ہے ‘‘۔اس مسجد میں نماز جمعہ کے وقت بم دھماکے اور فائرنگ سے 235 افراد جاں بحق اور 110 سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

انھوں نے لکھا ہے کہ ’’ ہم اس مجرمانہ اور گناہ آلود فعل کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں ۔ہم دکھ اور مصیبت کی اس گھڑی میں آپ اور مصری عوام اور جاں بحق افراد کے خاندانوں کے ساتھ ہیں۔ہم سعودی عرب کی حکومت اور عوام کی جانب سے اس واقعے پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہیں‘‘۔

انھوں نے مزید لکھا ہے’’ ہم اللہ سے دعا کرتے ہیں کہ وہ مرحومین کو اپنے جوار ِرحمت میں جگہ دے ،زخمیوں کی حفاظت فرمائے اور انھیں جلد صحت یاب کرے۔سعودی عرب عوامی جمہوریہ مصر کی سلامتی اور استحکام کو ہدف بنانے والے کسی بھی خطرے کے مقابلے میں اس کے ساتھ کھڑا ہے‘‘۔

سعودی عرب کے ولی عہد ، نائب وزیراعظم اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان نے بھی مصر میں دہشت گردی کے اس واقعے کی سخت الفاظ میں مذمت کی ہے اور مصر کے صدر عبدالفتاح السیسی کے نام ایک الگ تعزیتی پیغام بھیجا ہے جس میں ان سے اور مصری عوام سے اس واقعے پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا ہے۔

انھوں نے اپنے پیغام میں لکھا ہے’’ مجھے شمالی سیناء میں ایک مسجد میں دہشت گردی کی بزدلانہ کارروائی میں اموات پر گہرا صدمہ پہنچا ہے۔میں اللہ کے گھر میں دہشت گردی کی اس مجرمانہ کارروائی کی مذمت کرتا ہوں جس میں بے گناہ لوگوں کو نشانہ بنا یا گیا ہے‘‘۔