.

صنعاء میں جھڑپیں،علی صالح کے بھتیجے کے تین محافظ ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں مںحرف سابق صدرعلی عبداللہ صالح کی جماعت ’پیپلز کانگریس‘ کا کہنا ہے کہ ایران نواز حوثی باغیوں اور علی صالح کے وفاداروں کے درمیان لڑائی جاری ہے۔ بدھ کے روز ہونے والی جھڑپوں کا سلسلہ کل جمعرات کے روز بھی جاری رہا۔ جھڑپوں میں علی صالح کے بھتیجے کے تین محافظوں سمیت متعدد افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ پیپلز کانگریس کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ صنعاء میں ہونے والی لڑائی میں سابق صدر علی صالح کے بھتیجے کرنل طارق صالح کے تین ذاتی محافظ ہلاک ہوگئے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ حوثی باغیوں نے پیپلز کانگریس کے رہ نما اور باغیوں کی قائم کردہ حکومت کے وزیر خارجہ ھشام شرف کے گھر کا بھی محاصرہ کیا۔ حوثیوں کے حملوں میں علی صالح کے تین وفادار زخمی بھی ہوئے ہیں۔

حوثی ملیشیا کے دو لیڈروں کی ہلاکت

’العربیہ‘ نیوز چینل کے ذرائع کے مطابق صنعاء میں علی صالح اور حوثیوں کے درمیان ہونے والی جھڑپوں میں دونوں متحارب گروپوں کا جانی نقصان ہوا ہے۔ حوثی باغیوں کا کہنا ہے کہ جھڑپوں میں دو حوثی لیڈر حمزہ یحییٰ المختار اور علی کریم ہلاک اور 10 زخمی ہو گئے۔

دارالحکومت صنعاء اور اس کے مضافاتی علاقوں میں ہونے والی جھڑپوں میں دسیوں باغی ہلاک ہوئے ہیں۔

خیال رہے کہ آئینی حکومت کا تختہ الٹنے میں متحد سابق مںحرف صدر علی صالح اور ایران نواز حوثیوں کے درمیان بدھ کے روز جھڑپیں شروع ہوئی تھیں۔ دونوں فریقیوں نے ایک دوسرے پر لڑائی شروع کرنے اور حکومت مخالف اتحاد کو سبوتاژ کرنے کا الزام عاید کر رہے ہیں۔