.

ہاون راکٹ حملے کے بعد غزہ میں حماس کے مراکز پر اسرائیلی بمباری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ گذشتہ روز شمالی غزہ سے ایک ہاون راکٹ اسرائیل کی طرف داغے جانے کے بعد فوج نے جوابی کارروائی کرتے ہوئے غزہ میں حماس کے چار مراکز پر بمباری کی ہے۔

اسرائیلی فوج کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ شمالی غزہ کی پٹی سے ایک ھاون راکٹ اسرائیلی کالونیوں پر داغا گیا تھا جس کے بعد ٹینکوں اور جنگی طیاروں سے حماس کے زیر انتظام چار مراکز پر بمباری کی گئی۔

غزہ کی پٹی سے اسرائیل پر ہونے والے کسی بھی حملے پر عموما اسرائیل حماس ہی کو مورد الزام ٹھہراتا ہے۔ اگرچہ فریقین جولائی اور اگست 2014ء کو لڑی گئی خونی جنگ کے بعد طے پانے والے فائر بندی معاہدے پرعمل درآمد کا دعویٰ کرتے ہیں مگر غزہ سے راکٹ حملوں کی آڑ میں اسرائیلی فوج اکثر غزہ پر بمباری کرتی رہتی ہے۔

اسرائیل کی طرف سے یہ بمباری ایک ایسے وقت میں کی گئی ہے جب حماس اور فتح مصر کی زیر نگرانی طے پائے مصالحتی معاہدے پر عمل درآمد کی کوششیں کر رہی ہیں۔ دو روز قبل دونوں جماعتوں نے قومی حکومت کو امور سونپنے کا معاملہ مزید دس روز کے لیے موخر کردیا تھا جس کے بعد قومی مصالحت کی کامیابی کے بارے میں خدشات پیدا ہونے لگے ہیں۔