.

عراق : الحشد الشعبی کے 13 بریگیڈز شام کے ساتھ سرحد پر تعینات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کی شیعہ ملیشیاؤں پر مشتمل فورسز الحشد الشعبی کے تیرہ بریگیڈز کو داعش کے ایک مبینہ حملے کے بعد شام کے ساتھ واقع سرحد پر تعینات کردیا گیا ہے۔

عراقی فوج کے ایک کمانڈر نے کہا ہے کہ ان شیعہ ملیشیاؤں کو شام کے ساتھ واقع سرحدی علاقے میں بھیجنے کا فیصلہ وہاں سرحدی فورسز کے ساتھ پیش آنے والے فائرنگ کے ایک واقعے کے بعد کیا گیا ہے۔

عراق کی سرحد ی فورسز پر شام کی جانب سے فائرنگ کی گئی تھی۔تاہم ابھی تک یہ معلوم نہیں ہو سکا ہے کہ یہ کس گروپ نے فائرنگ کی تھی۔الحشد الشعبی فورسز کے ذرائع کا کہنا ہے کہ داعش اس حملے کے ذمے دار ہوسکتے ہیں اور انھوں نے اپنے زیر قبضہ شہری مراکز کھو جانے کے بعد اب گوریلا جنگ شروع کردی ہے۔

عراق کے مغربی صوبے الانبار میں تعینات فوجی کمانڈر قاسم مصلح نے ایک بیان میں کہا ہے کہ شام کے ساتھ واقع سرحد پر متعدد چوکیوں کو گائیڈ ڈ میزائلوں سے نشانہ بنایا گیا تھا اور ان حملوں میں دسیوں سرحدی محافظ زخمی ہوگئے ہیں ۔اس کے بعد الحشد الشعبی کے تیرہ بریگیڈز کو سرحدی علاقے میں بھیج دیا گیا ہے اور انھوں نے راکٹ چلانے کے منبع کو ہدف بنانا شروع کردیا تھا۔