.

سعودی عرب کی سحر انگیز "وادیِ دیسہ" کا تعارف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے شہر تبوک کے جنوب مغرب میں واقع "وادیِ دیسہ" مملکت کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی جانب سے اعلان کردہ عظیم الشان منصوبے "نیوم" کے لیے ایک اہم ترین قدرتی مقام کی حیثیت رکھتی ہے۔ منصوبے میں بحرِ احمر پر کئی پہاڑی اور تاریخی علاقے شامل ہیں۔

وادی دیسہ منفرد جغرافیائی محلِ وقوع رکھتی ہے۔ بلند پہاڑوں نے اس کا احاطہ کر رکھا ہے اور اطراف میں مختلف شکلوں کی اونچی چٹانیں بھی پائی جاتی ہیں۔ ان چٹانوں کے درمیان سے پانی آنے کا سلسلہ پورے سال جاری رہتا ہے۔ اس کے علاوہ بارشوں کے موسم میں بعض مقامات پر آبشار بھی نظر آتے ہیں۔

وادی دیسہ کا شمار سعودی عرب کی خوب صورت ترین وادیوں میں کیا جاتا ہے۔ یہ سیاحت اور سفر کا شوق رکھنے والوں کے لیے مشہور و معروف مقام ہے۔

پہاڑوں اور چٹانوں کے بیچ واقع اس وادی کے حسین قدرتی مناظر دیکھنے والوں کو اپنے سحر میں مبتلا کر دیتے ہیں۔

وادی میں واقع پہاڑوں اور چٹانوں پر آثاریاتی نقوش موجود ہیں۔ ان میں قومِ ثمود اور نِبطیوں کے زمانے کی تحریروں کے علاوہ کوفی عربی خط میں لکھائی بھی نظر آتی ہے۔

تبوک صوبے میں کام کرنے والے کیمرہ مین عوض الحربی کا کہنا ہے کہ دیسہ کے علاقے کا برتر جمال تصاویر کے ذریعے کما حقہ سامنے نہیں آ سکتا۔

ایک اور کیمرہ مین عبدالعزیز البلوی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو وادی دیسہ کی بعض تصاویر فراہم کیں۔ البلوی کا کہنا ہے کہ وہ اس سحر انگیز مقام پر طویل وقت گزارتے ہیں جو قدرتی مناظر کو کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کرنے والوں کو اپنی طرف کھینچ لیتا ہے۔

اس خوب صورت مقام پر بہت سے مناظر دیکھ کر عقلیں دنگ رہ جاتی ہیں۔