.

مصر : چرچ پر حملے کی تفصیلات اور تصاویر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر میں جمعے کے روز شدت پسندوں نے الجیزہ صوبے کے ایک گاؤں میں واقع چرچ پر دھاوا بول کر وہاں توڑ پھوڑ کی اور قِبطیوں کی عبادت سے روک دیا۔

عینی شاہدین نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ جمعے کی نماز کے بعد پیش آنے والے اس واقعے میں فریقین کے درمیان تصادم کے نتیجے میں دو افراد زخمی ہو گئے جنہیں ہسپتال منتقل کر دیا گیا۔ سکیورٹی فورسز واقعے میں ملوث 28 افراد کو گرفتار کرنے میں کامیاب ہو گئیں۔

چرچ کے پادری نے سکیورٹی فورسز کو واقعے کی اطلاع دی جس کے بعد سکیورٹی اداروں کی بھاری نفری جائے مقام پر پہنچ گئی اور ہجوم کو علاحدہ کر کے ملوث افراد کو حراست میں لے لیا۔

عینی شاہدین کے مطابق جھڑپوں میں زخمی ہونے والوں میں وہ شخص بھی شامل ہے جس نے اس مقام پر چرچ کی تعمیر کے لیے زمین عطیہ کی۔

ذرائع کے مطابق اس طرح کی افواہیں گردش میں تھیں کہ مذکورہ چرچ کے حکام گھنٹی نصب کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ اس کے ردّعمل میں سیکڑوں لوگ چرچ کے باہر جمع ہو گئے اور انہوں نے نعرے لگا کر چرچ کو منہدم کرنے کا مطالبہ کیا۔

چرچ کے صدر بِشپ کے مطابق حملے کے مقام پر تقریبا 15 برسوں سے عبادت کی انجام دی جا رہی ہے اور چرچوں کی تعمیر سے متعلق قانون جاری ہونے کے بعد اس کو چرچ میں تبدیل کرنے کی باقاعدہ درخواست دی گئی۔